بلوچ گلزمین ءِ جارچین

 

 وش آتکے

|

 Download Balochi Font and view Balochi text uniquely 

| گوانک ٹیوب | لبزانک | نبشتانک | سرتاک

|

Gwank Kuzdar 2009/08/31

 Joint sec of Baloch National Movement has martyred by Pakistani intellegence agency after kidnaping

Rasool Bux Mengal joint secretory of Baloch national Movement (BNM) had kidnaped by Pakistani intellegence agency from UTHAL before a week ago when he was back to his home in khuzdar after visiting his lands and forms in Sindh.Today morning his dead body was found in Bela in front of a hotel.He was a radical political leader,he left his govt job of a bank in 1997 and started organizing the Baloch nation in a proper manner.He struggled for the freedom of Baloch nation politically and democratically.He organized the radical workers of BNM in Khuzdar and arranged many programs like workshops,public gatherings,lecture programs and demonstrations.He was one of the good friends of late chairman BNM waja Ghulam Mohammad (Also martyred by pakistani Forces previous months).Today there was complete shutter down strike in Khuzdar and violance from Balochs.His funeral will be held at today at Salehabad and will be burried with the flag of free Balochistan.The international Human rights organization should take action against the 5th genocide of Balochs.Khuzdar Balochistan


کوئٹہ ( پ ر ) بلوچ نیشنل موومنٹ کے جونیئر جوائنٹ سیکریڑی رسول بخش مینگل کی شہادت پر بلوچ نیشنل فرنٹ کے جنرل سیکریٹری عصاءظفر نے بلوچستان بھر میں تین دن کی شٹر ڈاﺅن اور پہیہ جام ہڑتال کی کال دی ہے ۔انہوںنے کہاہے کہ رسول بخش مینگل کی شہادت بلوچ قومی تحریک آزادی کے لیے ہے ان کی قربانی کو مشعل راہ بناتے ہوئے منزل کی طرف پیش قدمی جاری رکھیں گے ۔ریاست اور اس کے وحشی فورسز بلوچ قیادت کو نشانہ بناکر تحریک آزادی سے دستبرداری کے لیے دباﺅ ڈالنا چاہتے ہیں ۔سنگت کی شہادت غیر متوقع واقعہ نہیں تحریک سے وابستہ ہر فرد غیر مہذب ریاست سے اس سے بھی زیادہ وحشیانہ عمل کی توقع رکھتاہے ۔بلوچ صدیوں سے اپنی قومی آزادی کے لیے قابض قوتوں سے لڑتے آرہے ہیں شہادتیں راستے میں رکاوٹ نہیں بن سکتیں بلکہ مزید استحکام اور منظم انداز میں جدوجہد کو آگے بڑھانےکے لیے شہہ دینے کے باعث ہیں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئٹہ ( پ ر ) بلوچ نیشنل موومنٹ کے مرکزی دفتر اطلاعات سے جاری کردہ بیان میں کہاگیاہے ۔بلوچ نیشنل موومنٹ کے جونیئر جوائنٹ سیکریٹری رسول بخش مینگل کو 23اگست کی شام ایف سی کے اہلکاروں نے درجنوں افراد کی موجودگی میں اوتھل کے علاقے وایارو سے اغواءکر کے لاپتہ کرنے کےبعد نہایت بے رحمانہ طریقے سے تشدد کے بعد شہید کردیا ہے۔ ا ن کی میت اغواءکی جگہ سے چالیس کلومیٹر دور بیلہ کے علاقے ویلپٹ گنداچہ میں قلندری ہوٹل کے قریب درخت سے لٹکی ہوئی ملی ۔ان کی شناخت آسان بنانے کے لیے فورسز نے ان کا شناختی کارڈ گلے میں لٹکایا ہواتھا ۔شہید کی جسم کو فوجی بوٹوں سے روندھے جانےپکڑ سے گوشتنوچنے کے نشانات تھے اور تیز دھار آلہ سے جسم پر جگہ جگہ بی ایل اے اور بی این ایم مرد ہ باد لکھا گیاتھا ۔ واقعہ کے ردعمل میں بلوچ قوم کو پرامن رہنے کی اپیل شہید کے خون سے غداری ہے بلوچ قوم قابض ریاست اور اس کے گماشتوں کے خلاف بھر پور نفرت کا ا ظہار کرئے ۔ہمارے ردعمل کو واضح ،منظم اور منصوبہ بندی کے تحت ہونا چاہئے ۔دشمن کو جتانا ہو گا کہ ہم اپنے رہنماﺅں کی لاشوں کو خاموشی سے وصول نہیں کریں گے اور نہ ہی یوم سیاہ مناکر ماتم کیا جائے گا شہداءکی شہادت پر یوم سرخ مناکر ان کی شہادت کو تحریک کے لیے ایندھن بنانے کے فلسفے پر عمل کرنا چاہئے ۔ شہادت میں ملوث قابض فورسز کے افسران بیلہ میں تعینات ہیں۔ بی این ایم کی قیادت کو ٹارگٹ کر کے قتل کرنے کا فیصلہ پاکستا ن کے پنجابی مقتدرہ نے اعلی سطح پر کیاہے ۔شہید رسول بخش کی شہادت شہید غلام محمد بلوچ شہید شیر محمد ، شہید لالہ منیر اور شہیدبراھیم صالح کی شہادت کا تسلسل ہے ۔پاکستانی دہشت گردفورسزاپنے ان واضح وحشیانہ اقدام سے بی این ایم کی قیادت کو خطرناک انجام سے ڈرانے کی کوشش کررہے ہیں ۔ان کے گلے میں شناختی کارڈ لٹکا نے کامقصد یہی ہے کہ بلوچ قوم دوست قیادت کو پیغام دیا جائے کہ اگر انہوںنے تحریک آزادی کا راستہ نہیں چھوڑا توان کے ساتھ بھی یہی سلوک کیاجائے ۔ بی این ایم کی طرف سے دشمن کو واضح جواب ہے کہان کے ریاستی غنڈہ گردی اور وحشیانہ حرکتیں آزادی کے کارروان کو نہیں روک سکتیں یہ ایک شعوری فیصلہ ہے بلوچ آشوبی جھدکاروں کے جسم پر تشدد سے ان کی روح کو سکون ملتی ہے ۔بلوچ قائدین اپنی شہادتوں سے دنیا کو پاکستان کے بالادست پنجابی فورسز کاگھناﺅنا چہرہ دکھارہے ہیں جوکہ بلوچ وسائل اور زمین پر قبضے کے لیے غیر انسانی ہتھکنڈے استعمال کررہاہے۔ پاکستان جتنی ننگی جارحانہ حرکتیں کرئے گا تحریک آزادی اتنی ہی زیادہ مضبوط ہوگی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئٹہ ( پ ر ) شہید رسول بخش مینگل بی این ایم کے بانی اراکین میں سے تھے۔جب شہید غلام محمد بلوچ نے اعلان کیا کہ اب پاکستان کا پارلیمانی نظام بلوچ قومی آزادی کا راستہ نہیں ہوسکتا اور بلوچستان نیشنل موومنٹ کا نام بدل کر بلوچ نیشنل موومنٹ رکھ کر بلوچستان کی سیاسی تاریخ میں پہلی مرتبہ واضح طور پر آزادی کی تحریک چلانے کا اعلان کیا تو شہید اُن چند لوگوں میں شامل تھے جنہوں نے ان کے موقف کی تائید کی اور ببانگ دہل کہا کہ وہ شہید غلام محمد کی ہر طرح سے حمایت کریں گے ۔و ہ شہید لالہ منیر کے بعد بی این ایم کے دوسرے قائد ہیں جو آخری دم تک شہید غلام محمد بلوچ کے قومی آزادی کے فلسفہ سے وابستہ رہے اور ثابت کردیاکہ بلوچ تحریک آزادی میں بی این ایم کے دوستوں کا کٹنے مرنے کے باوجود جدوجہد جاری رکھنے کا عزم مضبوط عقیدہ ہے ۔ یہ باتیں شہید رسول بخش مینگل کے حوالے سے بلوچ نیشنل موومنٹ کے مرکزی دفتر اطلاعات سے جاری کردہ تعارفی بیان میں کی گئی ہیں۔بیان میں کہا گیاہے شہید ایک مثالی انقلابی جھدکار ، سائنسی بنیادوں پر قومی سیاست کرنے اور نظم وضبط کی پابندی پر یقین رکھنے والے انسان تھے ۔شہید اجلاس میں دھیمی لہجے میں صبر وتحمل کے ساتھ گفتگوکرتے تھے لیکن اپنے موقف پر آپ کا رویہ ہمیشہ غیر لچکدار رہا۔آپ کو دوسرے سنگت اجلاس میں بات بات پر بائیکاٹ کرنے پرتنقید کا نشانہ بناتے تھے لیکن آپ اس عمل کو جمہوریت کا حسن قرار دیاکرتے تھے ۔آپ کو ساتھی جھد کاروں سے انتہائی محبت تھی لیکن پارٹی ڈسپلن کے معا ملے میںذاتی دوستی خاطر میں نہیں لایا کرتے تھے ۔ جب بی ایس او (متحدہ ) کے سابق چیئر مین ڈاکٹر امداد ڈاکٹر اللہ نذر کی بازیابی کے حوالے سے کراچی پریس کلب کے سامنے بھوک ہڑتال پر بیٹھے تھے تو اس سے اظہار یکجہتی کے لیے خضدار سے کراچی تک پیدل لانگ مارچ کیا ۔آپ مضبوط اعصاب کے مالک تھے جس کاانداز اس بات سے لگایا جاسکتاہے کہ طویل پیدل سفر کے باوجود کراچی میں بھوک ہڑتالی کیمپ میں پہنچ کرتادم مرگ بھوک ہڑتال پر بیٹھ گئے اور اس وقت تک اپنی بھوک ہڑتال جاری رکھی جب ڈاکٹر امداد نے اپنی بھوک ہڑتال ختم کردی ۔اُن کی شہادت سے بلوچ نیشنل موومنٹ ایک مخلص اور انقلابی سوچ رکھنے والی قیادت سے محروم ہوگئی ہے لیکن اُن کی قربانی آنے والی نسلوں او ر پارٹی کےجھدکاروں کے جذبات کو ہمیشہ تروتازہ رکھنے کا باعث بنے گی ۔بی این ایم اس شہادت پر شہید کو سر خ سلام قوم اور جھدکارسنگتوں کو مبارک باد پیش کرتی ہوئی اس عزم کو دہراتی ہے کہ قربانیوں کا تسلسل جاری رہئے گا ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


.