بلوچ گلزمین ءِ جارچین

 

 وش آتکے

|

 Download Balochi Font and view Balochi text uniquely 

| گوانک ٹیوب | لبزانک | نبشتانک | سرتاک

|

 

بی این پی کےسیکریٹری جنرل حبیب جالب کے قتل کی مذمت

 بلو چ نیشنل موومنٹ کے قائمقام صدر عصا ظفر

 Wednesday, July 14, 2010

کوئٹہ ( پ ر )بلو چ نیشنل موومنٹ کے قائمقام صدر عصا ظفر نے بی این پی کے
سیکریٹری جنرل حبیب جالب کے قتل کی مذمت کرتے ہوئے اسے پاکستانی مقتدرہ
کے سفاکانہ اقدامات کا تسلسل قرار دیا ۔انہوں نے کہا ہے کہ پاکستانی
ایجنسیوں کی سر پرستی میں جراہم پیشہ افرادکو بلوچ سیاسی رہنماﺅں کے قتل
کا کام سونپا گیا ہے ۔ایجنسیوں کے پوشیدہ مقاصد کو ناکام بنانے کے لیے
بلوچ دوست قوتوں کو سر جوڑ کر نئی حکمت عملی وضع کرنی ہوگی دشمن کا
  .روایتی طریقوں سے مقابلہ کرناممکن نہیں مزیدسنجیدگی کامظاہرہ کرنا ہوگا 
 دریں اثناء بلوچ نیشنل موومنٹ کے دفتر اطلاعات سے جاری کردہ بیان میں
کہا گیاہے کہ حبیب جالب کا قتل دشمن ریاست کی طرف سے واضح پیغام ہے کہ
بلوچ چاہئے پارلیمانی سیاست سے کنارہ کرئے یا اسی میں رہ کر زبانی کلامی
بلوچ حقوق کی بات کرئے حق خودارادیت جیسا ذومعنی مطالبہ کرئے یا آزادی
مانگے ریاست اسے موت کے علاوہ کچھ دینے کوتیار نہیں ۔ بلوچستان میں
اُجرتی قاتل ایف سی کیمپ کے احکامات اور ہتھیار وں سے بلو چ قیادت کو
نشانہ بنارہے ہیں حبیب جالب کو شہید کرنے کا مقصد بلوچستان میں انارکی پیدا
کرنا ہے ۔حالات میں ابہام پیدا کیا جارہاہے تاکہ جہدوجہد آزادی میں حق
وباطل کی تمیز نہ رہے ۔ بی این پی کو مشورہ دیتے ہیں کہ وہ قوم کو مزید
اُلجھن میں رکھنے کی بجائے بلوچ نیشنل فرنٹ ( بی این ایف ) کے تین نکا ت
پر اتفاق کرتے ہوئے جہد آزادی کا حصہ بنے تاکہ کل اگر کسی رہنماء کو قتل
کیا جائے تو قوم اس کی قربانی کی وجہ سمجھ سکے۔ حق خودارادیت اور جہد
آزادی کے تمام ذرائع استعمال کر نتے کے نعرے زائد المعیاد ہوچکے ہیں اب
سیدھا راستہ اختیار کیے بغیر کامیابی ممکن نہیں۔ دریں اثناء بی این پی کے
مرکزی سیکریٹری جنرل کے قتل کے بعد بی این ایم کے سیکریٹری اطلاعات قاضی
داد محمد نے بی این پی کے مرکزی رہنماﺅں کو فون کرکے اُن کے قائد کی
شہادت پر تعزیت کی اور بی این ایم کی طرف سے یقین دہانی کرائی کہ بی این
ایم انتشار اور جذباتی سیاست پر یقین نہیں رکھتی بلوچ قوم میں اتحاد
ویکجہتی پیدا کرنا پارٹی آئین ومنشور کا حصہ ہیں اس لیے بلوچ قوم دوست
جماعتو ں کو بی این ایف کے نکات پر ایک فلیٹ فارم پر اکٹھا کرنا چاہتے
ہیں ۔ حالات کا تقاضا ہے کہ قوم دوست سیاست میں دانشمندانہ انداز میں نئی
صف بندیاں کی جائیں دشمن کی سازش ہے کہ بلوچ قوم مختلف ٹولیوں میں تقسیم
رہ کر ایک دوسر ے کے خلاف اپنی توانائی ضائع کریں اگرہم تمام نکا ت پر
اتفاق نہیں کرسکتے لیکن بی این ایف کے کم ازکم تین نکات پر اتفا ق کر کے
تحریک کو مضبوط کیاجاسکتا ہے ۔