بلوچ گلزمین ءِ جارچین

 

 وش آتکے

|

 Download Balochi Font and view Balochi text uniquely 

| گوانک ٹیوب | لبزانک | نبشتانک | سرتاک

|

Monday, January 31, 2011
Quetta

بلوچ نیشنل موومنٹ کے ترجمان

کوئٹہ (پ ر)بلوچ نیشنل موومنٹ کے ترجمان نے کہا ہے کہ ڈیرہ بگٹی میں تشدد، لوٹ ماربدستور جاری ہے رحیم بخش اور خاور کا تاحال لاپتہ ہیں اس طرح کی کاروائیوں سے بلوچ قوم میں موجود آزادی کے ابھار کومفلوج نہیں کیا جاسکتا ریاست کے خفیہ اداروں کے وحشی اہلکاروں نے براہوئی زبان کے گلوکار علی جان ثاقب کو شال سے دو ماہ قبل اغوا کرکے لاپتہ کیا تھا جسکی گذشتہ دن تشدد زدہ لاش پھینک دی ہے بلوچستان کے ہر علاقے میں اس طرح کاریاستی ظلم و جبر جاری ہے ترجمان نے کہا براعظم افریقہ و عرب ریاستوں میں قومی و عوامی تحریکیں تیزی سے متحرک ہوگئیں ہیں یہ ابھاراچانک پیدا نہیں ہوئے ہیں بلکہ نصف صدی کے دوران استحصال کا پکا ہوا لاوا ہے تیونس ، مصر، یمن میں عوام سامراجی و آمر حکمرانوں کے خلاف اٹھ کھڑے ہوگئے ہیں دنیا میں اس وقت سرد جنگ کے دوران بنائی گئی سامراجی حکمران قابض ہیں تیونس ، مصر، یمن میں عوامی ابھار مستقبل کی تبدیلی کیلئے ایک مثبت پیغام ہے اور اس بات کی نوید ہے کہ مسلم اکثریتی علاقوں میں عالمی سامراج نے مذہب کے نام پر سرد جنگ کے دوران جو آمر حکمرانوں کا نیٹ ورک پھیلا رکھا ہے اب اس کا شیرازہ بکھررہاہے پاکستان و ایران میں بلوچوں اور کردوں نے خطے میں قومی جدوجہد کی دوڑ میں پہل کی ہے جس کی وجہ سے قابضین بلوچ اور کردوں کا خاموشی سے قتل عام کرہی ہیں جس سے توجہ ہٹانے کیلئے خودساختہ دہشتگردی کا واویلا مچایاجارہا ہے اپنی ہی پرچھائی سے لڑ کر شور مچایا جارہاہے دہشتگردی کے خلاف جنگ شروع کرنے کا مقصد مستقبل میں متوقع اور ممکنہ قومی و عوامی انقلابات کا راستہ روکنا ہے جس کو بلوچ قوم ناکام بنارہی ہے پاکستانی ایجنسیاں خودکش حملے اور عوامی اجتماعات میں دھماکے کرواکر اس بہانے کرایہ کے جٹ ،جاہل اور حقائق سے بے خبر سپاہیوں کو شہروں، محلوں ،سڑکوں ،شاہراہوں چوکوںاور ناکوں پر تعینات کررہی ہے جو ممکنہ آنے والی جدوجہد کو روکنے کیلئے ریاستی فورسز کی طرف سے پیشگی مشقیں ہیں جس میں مذہبی فرقہ پرستی کا بہانہ بنایاجارہاہے سندھی قوم قابض کے خلاف منظم ہورہی ہے جبکہ پختونوں کو غیر عوامی ایشوزمیںا لجھادیا گیا ہے پختون اپنی بقا ءو ترقی کےلئے پراکسی وار کا حصہ بننے کی بجائے پختون قومی تحریک آزادی کیلئے نظریاتی خطوط پر منظم و متحرک ہوجائیں ورنہ پاکستان دنیا کی قبضہ گیر طاقتوں کے ساتھ مل کر اسی طرح پختونوں کوکچلتا رہے گا۔
 
 
Terror and loot Constantly Continuing in Dera Bugti, Such Heinous Crime Cannot Paralyze the Upsurge of Baloch Freedom Movement in Balochistan, BNM
Reported by Archen Baloch, 1/2/2011
Occupied Balochistan: The statement issued by Baloch National Movement says that the military operation of terror and loot in dera Bugti is constantly continuing. Rahim Baksh and Khawer are still missing. It says that state sponsored terrorism cannot paralyze the freedom movement. The statement says that the secret agencies have dumped the tortured body of Bravi language singer Ali Jan Saqib in a desolate area. He was abducted two months ago from Shaal. Such heinous crimes of state sponsored terrorism are continuing from all over Balochistan. The statement issued by BNM spokesperson further stated that the popular movements in African continent and Arab world are highly active.  It says that this movement isnít a spontaneous uprising, but a result of a half century old exploitation of masses which has now become a ripen volcano ready to erupt. The Public in Tunisia, Egypt and Yemen have now risen against the despotic and imperial rulers. The world is still in the grip of despotic regimes imposed upon masses by imperial forces during cold war era. The uprising in Tunisia, Egypt and Yemen is a positive message for future changes. And it ushers in a new chapter in the majority of Muslim world where the imperial forces established a network of despotic regimes in the name of religion during cold war. But now they are collapsing. Baloch and Kurds were the pioneer of this popular movement in Pakistan and Iran. This is the main reason that Iran and Pakistan are surreptitiously committing the heinous crime of genocide of Kurdish and Baloch public. To distract the attention of world community, they have now started wailing of so called terrorism. The war against terrorism is a lame excuse, it has been brought in just to create hurdle in the way of possible public and national movement and revolutions. And Baloch is striving to render it into failure. Pakistani state, through its agencies, is engaged in carrying out suicidal bombardment and bomb blast in public places, and deploying its ignorant and rude mercenary forces on all roads, alleys, and highways of cities, and erecting check posts, which are pre-emptive exercises of occupying forces to contain the possible struggle. Sectarian violence is just an excuse only to execute this containment act. Sindhis are now getting united against the colonial force. But the Pashtun have been entangled into an unpopular issue; they should now adopt a strong national ideology and start an organized national struggle for their national freedom, instead of being a part of a proxy war. Otherwise, Pakistan, along with other occupying forces, would continue to crush the Pashtun.