اقوام متحدہ، عالمی طاقتوں کی خاموشی بلوچ قوم کی لسانی اور ثقافتی نسل کشی کا باعث بن رہی ہے – ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ

MUST READ

بلوچستـان ءِ پليـں شهيـدان ءَ هـــزاراں ســـلام

بلوچستـان ءِ پليـں شهيـدان ءَ هـــزاراں ســـلام

بلوچستــــان ءِ پُلّيــں شهيــدان ءَ هــزاراں ســــلام

بلوچستــــان ءِ پُلّيــں شهيــدان ءَ هــزاراں ســــلام

شکست اخلاقی اشغالگران

شکست اخلاقی اشغالگران

کوہلو کے علاقے کاہان میں سبی موڑ کے قریب ایف سی قافلے پر ریموٹ کنٹرول سے ہونے والے بم حملے کی زمہ داری قبول کرتے ہے۔ آزاد بلوچ

کوہلو کے علاقے کاہان میں سبی موڑ کے قریب ایف سی قافلے پر ریموٹ کنٹرول سے ہونے والے بم حملے کی زمہ داری قبول کرتے ہے۔ آزاد بلوچ

سید ھاشمی ریفرس کتابجاہ لس دیوانءِ نوکین گچین کاری 20 جنوريءَ بنت

سید ھاشمی ریفرس کتابجاہ لس دیوانءِ نوکین گچین کاری 20 جنوريءَ بنت

«تپاکی زندگیں راجءِ نشان اِنت»

«تپاکی زندگیں راجءِ نشان اِنت»

جئے سندھ متحدہ محاذ کے کارکن شهید سرویچ پیرزادہ کے والد لطف علی سے گفتگو

جئے سندھ متحدہ محاذ کے کارکن شهید سرویچ پیرزادہ کے والد لطف علی سے گفتگو

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ بخش آخـر

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ بخش آخـر

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ بخش آخـر

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ بخش آخـر

قلات و نوشکی میں بڑے پیمانے پہ فوجی نقل و حرکت کی اطلاع

قلات و نوشکی میں بڑے پیمانے پہ فوجی نقل و حرکت کی اطلاع

راجدوستیں بلوچاں تپاک بیگی انت

راجدوستیں بلوچاں تپاک بیگی انت

بلوچستان میں خواتین کی جبری گمشدگی وہلاکت افسوسناک و قابلِ مذمت ہیں:بی ایچ آر او

بلوچستان میں خواتین کی جبری گمشدگی وہلاکت افسوسناک و قابلِ مذمت ہیں:بی ایچ آر او

راهی بجز دفاع از موجودیت ملی و آزادی بلوچستــان باقی نمانده است

راهی بجز دفاع از موجودیت ملی و آزادی بلوچستــان باقی نمانده است

چرا قاتلانِ مردم بلوچ مجازات نمی شوند؟

چرا قاتلانِ مردم بلوچ مجازات نمی شوند؟

گوانڈین ریڈیو رپورٹءِ چا تمپءَ

گوانڈین ریڈیو رپورٹءِ چا تمپءَ

اقوام متحدہ، عالمی طاقتوں کی خاموشی بلوچ قوم کی لسانی اور ثقافتی نسل کشی کا باعث بن رہی ہے – ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ

2020-03-26 12:58:12
Share on

کوئٹہ بلوچ آزادی پسند و قوم دوست رہنما ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ نے سماجی رابطے کی ویب سائیٹ ”ٹوئٹر‘‘ پراپنے تازہ چندٹیوٹ میں کہا ہے کہ”چینی فوج نے گوادر میں کنٹونمنٹ بنانے کے لیے 3000 ایکر زمین حاصل کر لی ہے جب کہ اس کا سب میرین پہلے سے بحرِ بلوچ میں موجود ہے۔ یہ ہندوستان کے لیے باعثِ خطرہ ہے‘‘۔
انہوں نے بلوچستان میں پاکستانی فوج و ایجنسیوں کی جانب سے آئے روز آپریشن میں بلوچوں کی گمشدگی و قتل پر انسانی حقوق اداروں سمیت عالمی طاقتوں کی خاموشی کوشدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ”اقوام متحدہ اور عالمی طاقتوں کی خاموشی بلوچ قوم کی لسانی اور ثقافتی نسل کشی کا باعث بن رہی ہے۔ اقوام متحدہ کو ڈیرہ بگٹی میں اجتماعی قبر کی تحقیقات کرنے کے لیے بلوچستان میں مداخلت کرنی چاہیے۔ دنیا کو جاننے کی ضرورت ہے کہ بلوچستان ایک انسانی بحران سے گزر رہا ہے‘‘۔ بلوچ رہنما نے پاکستانی حکومت کی جانب سے خودکش بمباروں کی بلوچستان سے کراچی آنے کے اعترافی بیانات کے ردعمل میں کہا ہے کہ ”ہم نے پہلے بھی دنیا کو خبردار کیا تھا کہ داعش کا ایک کیمپ شفیق مینگل کی سربراہی میں بلوچستان کے بدری وڈھ علاقے میں سرگرم ہے۔ آج پاکستان بھی اعتراف کر رہا ہے کہ خودکش بمبار بلوچستان کے وڈھ علاقے سے کراچی جارہے ہیں‘‘۔ انہوں نے پاکستانی فوج کی زیر سرپرستی میں بلوچستان میں مذہبی شدت پسند گروہوں کی پھیلتی نیٹ ورک کے حوالے سے انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ ”بلوچ جدوجہد آزادی کو روکنے کے لیے آئی۔ایس۔آئی نے لشکر جھنگوی، لشکر طیبہ اور داعش کے تربیتی کیمپ مستونگ، کلات، واشک، پنجگور، آواران اور کیچ کے علاقوں میں قائم کیے ہوئے ہیں‘‘۔

Share on
Previous article

مروچی زرینہ مری ءُ مراد مریءَ پرین 3798 روچ انت کہ بیگواہ انت

NEXT article

27 March Black Day – Baloch Nation Rejects Forceful Occupation of Balochistan

LEAVE A REPLY