ایران کا غصہ

MUST READ

امپراتوریِ شیعیِ عجم بازندهٔ جنگ با اعراب

امپراتوریِ شیعیِ عجم بازندهٔ جنگ با اعراب

ایران کی جانب سے بلوچستان کے نام کی تبدیلی کی کوششوں کا پر زور الفاظ میں مذمت کرتاہوں۔ حیر بیار مری

ایران کی جانب سے بلوچستان کے نام کی تبدیلی کی کوششوں کا پر زور الفاظ میں مذمت کرتاہوں۔ حیر بیار مری

درماندگی فاشیسم تمامیت خواه پارس

درماندگی فاشیسم تمامیت خواه پارس

بلــوچ هُـــژّار

بلــوچ هُـــژّار

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

بلوچ ءِ هون هم سُهر اِنت ، مولوی صاحب

بلوچ ءِ هون هم سُهر اِنت ، مولوی صاحب

منی غیر بلوچیں معلمءَ منا هر وهد توهین کت ءُ جہل جت و کوشیشت کرت کہ من وانگءَ هلاس به کنان . سامان ریگی

منی غیر بلوچیں معلمءَ منا هر وهد توهین کت ءُ جہل جت و کوشیشت کرت کہ من وانگءَ هلاس به کنان . سامان ریگی

پاکستان جہادی کلچر ودہشت گردی کا مرکز و فیکٹری ہے : حیربیار

پاکستان جہادی کلچر ودہشت گردی کا مرکز و فیکٹری ہے : حیربیار

سویڈن میں 1998 کو بلوچستان میں چاغی کے پہاڑوں میں جوہری ہتھیاروں کا تجربہ کے خلاف آگاہی مہم

سویڈن میں 1998 کو بلوچستان میں چاغی کے پہاڑوں میں جوہری ہتھیاروں کا تجربہ کے خلاف آگاہی مہم

شہداء کا دن منا کر بلوچ قوم نے ثابت کیا کہ وہ اک زندہ قوم ہے : حیربیار مری

شہداء کا دن منا کر بلوچ قوم نے ثابت کیا کہ وہ اک زندہ قوم ہے : حیربیار مری

صوفی باہوٹ چک پیر محمد سری کلگ پیدارک کیچ ءُ ولی محمد چک شکاری یوسف سولانی سری کلگ پیدارک کیچ بیگواهیءُ شهادتءِ حال

صوفی باہوٹ چک پیر محمد سری کلگ پیدارک کیچ ءُ ولی محمد چک شکاری یوسف سولانی سری کلگ پیدارک کیچ بیگواهیءُ شهادتءِ حال

بلوچ سرزمین پر قابض ریاستوں کا بلوچ دشمن خندقیں اور دیواریں کھڑی کرنے کا مشترکہ شازش

بلوچ سرزمین پر قابض ریاستوں کا بلوچ دشمن خندقیں اور دیواریں کھڑی کرنے کا مشترکہ شازش

کئے لــڈینگ ءُ بلوچستـــــان ءَ آرگ بنــت ؟

کئے لــڈینگ ءُ بلوچستـــــان ءَ آرگ بنــت ؟

بلوچستــــان گلزميـــن اجـــدادی ماســـت

بلوچستــــان گلزميـــن اجـــدادی ماســـت

بلوچستان کو پاکستانی فوج نے بلوچ قوم کے لیے نوگو ایریا بنادیا ہے : حیر بیار مری

بلوچستان کو پاکستانی فوج نے بلوچ قوم کے لیے نوگو ایریا بنادیا ہے : حیر بیار مری

ایران کا غصہ

2020-03-27 10:15:38
Share on

روزنامہ آزادی

   مارچ 29, 2014

 ایران کا غصہ کم ہوتا نظر نہیں آرہا ہے ۔ خصوصاً اس غیر مصدقہ اطلاع کے بعد کہ ایک مغوی کو زیر حراست ہلاک کیا گیا ۔ کیوں کیا گیا ؟ باقیوں کو کیوں قتل نہیں کیا گیا؟ ان سوالات کے جواب لوگوں تک نہیں پہنچا ۔ البتہ مملکت ایران کا غصہ پاکستان پر بڑھتا جارہاہے حالانکہ حکومت پاکستان یہ اعلانیہ اقرار کرچکاہے کہ ایران کے پانچ مغوی سرحدی محافظ پاکستان کی سرزمین پر نہیں ہیں اور نہ ہی مقتول مغوی کی لاش پاکستان سے ملی ۔ اس کے باوجود حکومت پاکستان نے ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ تفتیش میں ایران کی ہر ممکن مدد کریگا۔ ایران نے اپنے الزامات کو ثابت کرنے کے لیے آج تک کوئی ثبوت فراہم نہیں کیے ۔حکومت پاکستان کے ترجمان نے کئی بار یہ کہا ہے کہ یہ واقعہ ایران کی سرزمین پر ہوا اور اس کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ جیگی گور میں سرحدی محافظین کو یرغمال بنانے کے بعد وہ پاکستان کی سرحد کی طرف فرا ر ہوئے ہیں ۔ بہر حال جیش العدل نامی تنظیم کا پاکستان میں کوئی وجود نہیں ہے ۔ ایران کا تنازعہ اپنے ملک میں اور اپنے شہریوں سے ہے ۔ پاکستان نے اس تنازعہ میں مداخلت نہیں کی حالانکہ بلوچوں کی سب سے بڑی آبادی پاکستان میں رہتی ہے اور ان کی اپنی نمائندہ صوبائی حکومت ہے اور بعض بلوچ وزراء اور اہم ترین شخصیات کی رشتہ داریاں ایرانی بلوچوں کے ساتھ ہیں ۔ مگر سب لوگوں نے خصوصاً پاکستان میں بلوچ حکمرانوں نے ابھی تک نہ کوئی احتجاج کیا اور نہ ہی ایران کی حکومت سے کوئی رابطہ کیا کہ بلوچوں کے ساتھ ایران میں بہتر سلوک روا نہیں رکھا جارہاہے ۔ ایران میں بلوچ دوسرے درجے کے شہری ہیں ۔ بلوچ حکمرانوں نے ایران سے بہتر تاریخی برادرانہ تعلقات کا لحاظ رکھتے ہوئے مکمل خاموشی اختیار کی ۔ اس کے برعکس گزشتہ ایک سال سے ایران اور اسکے سرحدی محافظین بلوچ علاقوں میں گولہ باری کرتے رہے ہیں۔ پاکستان کی سرزمین پر کئی بار فوجی کارروائیاں کرتے رہے ہیں اور بعض کو ہلاک اور بعض کو اغواء کرکے ایران لے گئے ۔ ان پر بھی حکومت پاکستان اوربلوچ حکمرانوں نے روایتی احتجاج تک نہیں کیا ۔ یہ سب ظلم و زیادتی کو برداشت کیا اور یہ توقع رکھی کہ ایران اپنے ہی بلوچ شہریوں کے ساتھ بہتر سلوک روا رکھے گا ۔ حالیہ دنوں میں ایرانی مسلح افواج نے بغیر کسی اشتعال کے تال آپ جو تفتان سرحد سے متصل ہے عام شہریوں پر فائر کھول دیا ۔ جس میں ایک خاتون خانہ گھر کے اندر گولی لگنے سے شدید زخمی ہوئیں اور ان کو ہنگامی بنیاد پر اسپتال میں علاج کی خاطر داخل کردیا گیا ۔ اس طرح کی فائرنگ کے واقعات حالیہ دنوں میں زیادہ ہورہے ہیں ۔ اور ایران کی حکومت یہ تاثر دینا چاہتی ہے کہ سرحدی علاقوں میں بسنے والے غریب لوگ اس کے خلاف ہیں اور ہر پاکستانی شہری ایران کے خلاف سازش کررہا ہے ۔ دوسری جانب پاکستان خود دہشت گردی کے ہاتھوں زخم خوردہ ہے ۔ اس کے پچاس ہزار شہری دہشت گردوں کے ہاتھوں شہید ہوئے ہیں۔ان میں پانچ ہزار سے زائد سیکورٹی افواج کے اہلکار تھے ۔ ظاہر ہے کہ پاکستان خود دہشت گردی سے شدید طورپر متاثر ہے اور اسی کی وجہ سے قومی معیشت کو ابھی تک 78ارب ڈالر کا نقصان ہوچکا ہے ۔ ایسی صورت میں پاکستان کیوں اپنے برادر پڑوسی ملک کے خلاف دہشت گردی کی حمایت کرے گا۔ لیکن اس کے برعکس ایران یہ مسلسل دھمکی دے رہا ہے کہ ایران کے مسلح افواج کے دستے پاکستان پر حملہ آور ہونے کے لئے تیار کھڑے ہیں ۔ سرحدی علاقوں سے آمدہ اطلاعات کے مطابق ایران نے اس حملے کی تیاری کے سلسلے میں مشینی دستوں خصوصاً ٹینک اور بکتر بند گاڑیاں کو سرحدی علاقوں میں تعینات کیاہے اور وہ کسی بھی وقت پاکستان پر حملہ کر سکتے ہیں ۔

Share on
Previous article

بلوچ ورنایانی کشت ءُ کوش تروریستی سپاه ءِ کارانت

NEXT article

پنجگور کے علاقے تپس ہائی اسکول کے قریب سے فورسز نے اکرم ولداسمائیل کو اِن کے گھر کے سامنے سے اغوا کرلیا

LEAVE A REPLY