بلوچ آزادی پسندوں کا پاکستان کے خلاف دنیا بھر میں مظاہرے

MUST READ

بالاچ راجءِ دپتران مدام زندگ انت

بالاچ راجءِ دپتران مدام زندگ انت

شرکت مزدوران خارجی سپاه قدس در سرکوب مردم بپاخاسته

شرکت مزدوران خارجی سپاه قدس در سرکوب مردم بپاخاسته

اعدام امیر دوست محمد خان بارکزائی و سر نوشت بلوچستان

اعدام امیر دوست محمد خان بارکزائی و سر نوشت بلوچستان

گروہی سوچ اور منتشر بلوچ قوت – اداریہ

گروہی سوچ اور منتشر بلوچ قوت – اداریہ

سچ وہی جو جھوٹا بولے – کردگار بلوچ

سچ وہی جو جھوٹا بولے – کردگار بلوچ

نمیرانی ءِ کشک شھید نور محمد ءِ نام ءَ

نمیرانی ءِ کشک شھید نور محمد ءِ نام ءَ

‫عبد الرئوف ریگی ترورشد

‫عبد الرئوف ریگی ترورشد

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

پگری گلامی – گُڈی بهر

پگری گلامی – گُڈی بهر

نژاد پرستی در ایران

نژاد پرستی در ایران

بلوچستـان ءِ پليـں شهيـدان ءَ هـــزاراں ســـلام

بلوچستـان ءِ پليـں شهيـدان ءَ هـــزاراں ســـلام

ترانے ڈاکتر اللہ نذر ءَ 3 جانوری 2016 کُتگ

ترانے ڈاکتر اللہ نذر ءَ 3 جانوری 2016 کُتگ

پُرامن افغانستان کی راہ میں پاکستان بڑی رکاوٹ ہے : حیربیار

پُرامن افغانستان کی راہ میں پاکستان بڑی رکاوٹ ہے : حیربیار

کندهار ءِ تروریستی ھلگر سپاه قدس ءُ لدیگی آی۰اِس۰آی ءِ کار اَت

کندهار ءِ تروریستی ھلگر سپاه قدس ءُ لدیگی آی۰اِس۰آی ءِ کار اَت

گار ءُ بیگواه بوتگین بلوچانی بیگواهیءِ احتجاجی کیمپءَ 2288 روچ گواستگ

گار ءُ بیگواه بوتگین بلوچانی بیگواهیءِ احتجاجی کیمپءَ 2288 روچ گواستگ

بلوچ آزادی پسندوں کا پاکستان کے خلاف دنیا بھر میں مظاہرے

2020-03-25 22:44:43
Share on

 کوئٹہ  / بلوچ نیشنل موومنٹ، بلوچ ریپبلکن پارٹی، بلوچ اسٹوڈنٹ کا بلوچستان میں ریاستی جبر اور بلوچ نسل کشی کے خلاف دنیا بھر کے مختلف ممالک میں مظاہرے کیے گئے۔ جرمنی، آسٹریلیاء، کینیڈا، لندن، جنوبی کوریا، اور سوئزلینڈمیں ہونے والے ان مظاہروں میں بلوچ کمیونٹی سمیت انسانی حقوق کے مقامی کارکنوں نے شرکت کی۔ جرمنی کے دو شہروں دارلحکومت برلن اور ہنوفر میں ریلی بھی نکالی گئی، جو مختلف سڑکوں سے گزر کر  پاکستان کی بربریت اور انسانی حقوق کی پامالیوں پر مہذب دنیا اور اقوام متحدہ سے مداخلت کی اپیل کی۔ مظاہروں میں شریک افراد نے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر اقوام متحدہ سے بلوچستان میں فوری مداخلت کے حوالے سے اپیل درج تھے۔ مظاہرین نے بلوچ نسل کشی بند کرنے اور بلوچستان سے پاکستانی قبضہ چھڑانے کے لئے عالمی اداروں سے مدد کا مطالبہ کیا۔ بلوچ رہنماؤں نے شرکاء سے اپنے خطاب میں کہا کہ اقوام متحدہ کی رکن ملک ہونے   کے باوجود بھی پاکستان انسانی حقوق کے حوالے سے اقوام متحدہ کی مجوزہ شقوں کا پابند نہیں ہے۔پاکستان کی فوجی و نیم فوجی اداروں کی جانب سے بلوچ عوام کی بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی روز کا معمول بن چکا ہے۔

پچھلے 68سالوں سے پاکستان بلوچ عوام پر قابض رہ کر ان کے حقوق کو غصب کررکھا ہے۔ بلوچ عوام کو تعلیمی اور معاشی حوالے سے دانستہ پسماندہ رکھا جا رہا ہے۔ لیکن ایک دہائی سے زائد کے عرصے سے پاکستانی فورسز براہ راست بلوچ عوام کی قتل عام میں مصروف ہیں، بلوچ عوام کی سیاسی آواز کو دبانے کے لئے نہتے سیاسی قیدیوں کو تشدد کے بعد ان کی لاشیں مسخ کرکے ویرانوں میں پھینکا جا رہا ہے۔ بلوچستان سے محتاط اندازوں کے مطابق کم از کم   25000 لوگ فورسز نے لاپتہ کررکھے ہیں۔ ان لاپتہ لوگوں پر مقدمات چلانے اور عدالتوں میں پیش کرنے کے بجائے انہیں فورسز اپنی حراست میں ہی قتل کرکے ان کی لاشیں پھینکتے ہیں۔ پاکستان کی عدلیہ اور میڈیا بھی بلوچ نسل کشی کرنے والی فورسز کا دفاع کرکے شریک جرم ہورہی ہیں۔ بلوچ عوام کی گھروں کو نظر آتش کرنے، دیہاتوں کو مسمار کرنے اور زبردستی نکل مکانی پر مجبور کرنے جیسے واقعات پاکستان فورسز روزانہ بلوچستان کے طور و عرض میں سرانجام دے رہی ہے۔ طویل عرصے کی بربریت اور ہزاروں کی تعداد میں نوجوانوں کی قتل و گمشدگیوں کے باوجود انصاف کے عالمی ادارے خاموشی اختیار کرکے پاکستان کو شہہ فرا ہم کررہے ہیں کہ وہ بلوچوں کی قتل عام بدستور جاری رکھے۔انہوں نے کہا کہ عالمی ادارے جتنی دیر تک اس بربریت کے خلاف آواز اٹھانے کے بجائے خاموشی اختیار کریں گے، پاکستان کی فورسز اتنی ہی شدت کے ساتھ بلوچ عوام پر ریاستی طاقت کو استعمال کریں گے۔ بلوچ رہنماؤں نے اقوام متحدہ پر زور دی کہ وہ پاکستان کی رکنیت منسوخ کرکے اسے بلوچ قتل عام کا جوابدہ ٹھہرائے۔مختلف ممالک میں ہونے والے ان مظاہروں سے بلوچ نیشنل موومنٹ کے رہنماء حمل حیدر بلوچ، ڈاکٹر نسیم، بلوچ ریپبلکن پارٹی کے رہنماء شیر محمد بگٹی،منصور بلوچ اور بی ایس او آزاد کے رہنماء لطیف جوہر بلوچ اور نیاز بلوچ نے خطاب کیا۔س آرگنائزیشن آزاد اور بلوچ ریپبلکن اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن کی جانب سے 10دسمبر کو   ”انسانی حقوق کا عالمی دن“ کی مناسبت سے بل

Share on
Previous article

داغ ننگی بر پیشانیِ خامنه ایِ خون آشام

NEXT article

گپے گـوں ناشریں امینی فـرد

LEAVE A REPLY