بلوچ سرزمین پر قابض ریاستوں کا بلوچ دشمن خندقیں اور دیواریں کھڑی کرنے کا مشترکہ شازش

MUST READ

شاعر ءُ ارواه – نمیرانیں واجہ عبدالصمد امیری

شاعر ءُ ارواه – نمیرانیں واجہ عبدالصمد امیری

چرا دولت آلمان شاهرودی را فراری داد؟

چرا دولت آلمان شاهرودی را فراری داد؟

سوءِ استفاده اشغالگران از فاجعه زلزله در کوردستان

سوءِ استفاده اشغالگران از فاجعه زلزله در کوردستان

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون بانک کارینا جهانیءَ

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون بانک کارینا جهانیءَ

جماعت اسلامی اور 20 اکتوبر1914 ؁ کی قومی کانفرنس – کردگار بلوچ

جماعت اسلامی اور 20 اکتوبر1914 ؁ کی قومی کانفرنس – کردگار بلوچ

چرا معافیت بندر چَهبار (چابهار) از تحریم های بین المللی به ضرر ملت بلوچ

چرا معافیت بندر چَهبار (چابهار) از تحریم های بین المللی به ضرر ملت بلوچ

قندیل بلوچ واجہ شهید صبا دشتیاری

قندیل بلوچ واجہ شهید صبا دشتیاری

دَرآمدیں گُشتاسبی کئے اِنت؟

دَرآمدیں گُشتاسبی کئے اِنت؟

گپ و ترانے گون بلوچ جرنلیسٹ واجہ صدیق بلوچ

گپ و ترانے گون بلوچ جرنلیسٹ واجہ صدیق بلوچ

آزادی سرزمينهاى اِشغالى حتمی است

آزادی سرزمينهاى اِشغالى حتمی است

پاکستان نے سی پیک کی کامیابی کےلئے بلوچستان میں ظلم و بربریت کا بازار گرم کیا ہوا- حیربیارمری

پاکستان نے سی پیک کی کامیابی کےلئے بلوچستان میں ظلم و بربریت کا بازار گرم کیا ہوا- حیربیارمری

بلوچستان ءِ راجی جنزءِ دیمپان چے اَنت؟

بلوچستان ءِ راجی جنزءِ دیمپان چے اَنت؟

انساندوستیں بلوچانی کمک کاری ءُ بلوچ دژمنیں سپاہ ءِ تکانسری

انساندوستیں بلوچانی کمک کاری ءُ بلوچ دژمنیں سپاہ ءِ تکانسری

شاهرودی مسئول اعدام صدها بلوچ است

شاهرودی مسئول اعدام صدها بلوچ است

منی پت شہید ڈاکٹر منان ءِ لہتیں یات – ذیشان بلوچ

منی پت شہید ڈاکٹر منان ءِ لہتیں یات – ذیشان بلوچ

بلوچ سرزمین پر قابض ریاستوں کا بلوچ دشمن خندقیں اور دیواریں کھڑی کرنے کا مشترکہ شازش

2020-03-26 14:51:27
Share on

Saturday, September 13

ایرانی رجعت پسند حکومت نے مغربی اور مشرقی بلوچستان میں ظاھری طور پر منشیات کی روک تھام کا نام دیکر 2007 میں کئی گہری فٹ خندقیں کھونے اور دیواریں کھڑی کرنے کا باقاعدہ طور پر آغار کیا جس میں بلوچستان کی ساحلی بیلٹ سے لیکر سے افغانستان کا سرحدی علاقہ شامل ھے جھاں پر بلوچستان کی حدود ختم ھوتی ھے یہ تقرببآ 700 کیلومیٹر لمبی ھے اور اسکا اب 90 % تعمیر تکمیل تک پہنچ چکا ھے۔
اس منصوبے میں ایران نے ایک کثیر رقم 590 میلیون ڈالرکا متخص کیا، اتنی بڑی رقم اس منصوبہ پر خرچ کرنا بلوچستان کی قومی آزادی کی تحریک کے خطرات کو روکنے اور بلوچ قومی رابطے کو منقطع کرنا اور کلچری اور اقتصادی طور پر انھیں مفلوج کرنا ھے تا کہ اس قومی آزادی کی تحریک کو فعال ھونے سے مختلف حوالے سے روک تھام کی جاسکے ۔
اپریل 2011 کو کو سابق ایرانی وزیر دفاع جنرل احمد وحیدی نے پاکستان کو مشرقی بلوچستان اور افغان سرحد پر خندقیں کھودنے پر تمام اخراجات کو ادا کرنے اور اس پر خفیہ طور پر دستخط بھی کئے گئے اور اس رقم کی ایک قسط بھی پاکستانی فوج اور اداروں کو دیگئی، مگر پاکستان کی طرف سے اس منصوبہ پر عمل درآمد تعطل کا شکار رھا۔ اب ایرانی حکومت کے دوبارہ اصرار پر اس کام کا آغاز پاکستانی فوج اور ایرانی ماھرین کی نگرانی میں چند ھفتوں سے جاری ھے۔ اور اسکے تمام اخراجات اور اس منصوبہ کو عملی جامع پہنانے کے لئے پاکسانی افسران کی خوش آمد کے لئے بڑی رقم متخص کی گئی ھے۔

Share on
Previous article

قلات و نوشکی میں بڑے پیمانے پہ فوجی نقل و حرکت کی اطلاع

NEXT article

پدا مئے بچ بالاچ انت – طلاءُ سنجگءُ ساچین – بشیربیدار

LEAVE A REPLY