زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

MUST READ

نوک نوکترین حال آوارانءِ زمین چنڈءِ رپورٹ

نوک نوکترین حال آوارانءِ زمین چنڈءِ رپورٹ

«تپاکی زندگیں راجءِ نشان اِنت»

«تپاکی زندگیں راجءِ نشان اِنت»

چرا معافیت بندر چَهبار (چابهار) از تحریم های بین المللی به ضرر ملت بلوچ

چرا معافیت بندر چَهبار (چابهار) از تحریم های بین المللی به ضرر ملت بلوچ

ایران ءِ پد منتگیں بُن رهبندءِ یک بَروَردے

ایران ءِ پد منتگیں بُن رهبندءِ یک بَروَردے

بر دانش آموزان بلــوچ چه می گـذرد؟ بخش دوم

بر دانش آموزان بلــوچ چه می گـذرد؟ بخش دوم

انڈیا میں بلوچستان پر سیمینار بلوچ رہنما حیربیار مری کا پیغام

انڈیا میں بلوچستان پر سیمینار بلوچ رہنما حیربیار مری کا پیغام

’چھ ہزار بلوچ جنگجو پاکستانی فوج کیخلاف مزاحمت کر رہے ہیں‘ ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ

’چھ ہزار بلوچ جنگجو پاکستانی فوج کیخلاف مزاحمت کر رہے ہیں‘ ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ

واجه پُردلی بلوچ ءُ واجه سرمچارءِ بلوچ گپ و تران گون کابل ٹی ویءَ بلوچ شهمیرانیءِ روچءِ بابتَءَ

واجه پُردلی بلوچ ءُ واجه سرمچارءِ بلوچ گپ و تران گون کابل ٹی ویءَ بلوچ شهمیرانیءِ روچءِ بابتَءَ

سپاه پاسـدارانءِ تروریستی ٹولـی

سپاه پاسـدارانءِ تروریستی ٹولـی

شکست اخلاقی اشغالگران

شکست اخلاقی اشغالگران

سلمان میایی را بی گناه پرپر کردند – علی میایی جدگال

سلمان میایی را بی گناه پرپر کردند – علی میایی جدگال

نامه محمد صابر ملک رئیسی پس از برخورد های تبعیض آمیز دوباره

نامه محمد صابر ملک رئیسی پس از برخورد های تبعیض آمیز دوباره

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران

اعلامیه سازمان جیش العدل

اعلامیه سازمان جیش العدل

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

2020-03-24 11:26:12
Share on

گل زمیں کی نَنگ پہ مٹنے والے شہیدوں کے نام اُنکے بچوں کے نام

تمہاری مُٹھی میں کاہکشائیں تھیں کاہکشاؤں کی خوشبووں سے زمین ساری مہک رہی تھی جو کوہساروں کی بند آنکھوں پہ تم قرینے سے رفتہ رفتہ چِھڑک رہے تھے تمہارے ہاتھوں کے بخت

فن پہ تلاطم وقت کی نظر تھی تمہارے سینے کی آگ تھی

وہ جو فکر روشن سے لے کے دشت و دمن تلک پھیلتی جا رہی تھی

نزار و مدقوق، خستہ جسموں کی لاغری تک بھڑک رہی تھی

ستارے خوابوں کا روپ دھارے تمھاری آفاق جیسی آنکھوں میں تیرتے تھے

وہ خواب جن پہ تلاطم

وقت سوختہ تھا اُسے تمھاری فراری سانسوں کا سلسلہ جَھٹ سے توڑنا تھا

تلاطُم وقت کی بقا کا معاملہ تھا۔

ہمارے نازک، نحیف خوابوں کی ایسے عالَم میں حیثیت کیا رزیل پاوَر کے مکرُوہ سینٹرز کے جو مفادات کو کھَٹکتے وہ اعلی اقدار کی فلاحی ریاستوں کے عظیم خوابوں کو کیسے مٹی میں نہ ملاتے؟

وہ عقل و منطق کے فکر و فن کے سراپے کیسے نہ مسخ کرتے؟

یہود و ہندو کا تم کو ایجنٹ نہ کیوں بتاتے؟

کہ یہ تو یکسر بقا کے سودے کا معاملہ ہے کہ قوم_لاچار و بےاماں کا وجود کیا ہے؟

زمیں سے مطلب ہے طاقتوں کو

میں سوچتی ہوں وہ وقت آئے تمھارے بچے

شوان، ماہ نور، زید، نادر، ہزاروں ننھے

یتیم پھولوں کے ساتھ مل کر ہزاروں ہاتھوں سے

کاہکشائیں خرد کی روشن حسیں رِدائیں بلوچ کے غم کے نام لیواؤں،

راہبروں کی انا پرستی کی اندھی آنکھوں پہ رفتہ رفتہ چِھڑکتے جائیں تو جاکے

شائد ہمارے اندر کے پاور سینٹر کا زور ٹوٹے

ہمارے اندر کی سامراجی نوابیوں کا غرور ٹوٹے

مرا یہ ماتم تمھارے خوں کا نہیں ہے پیارو

تمھارے خوابوں کی رائیگانی کا ڈر ہے لاحق

کہ دشمن_جاں تو مارتا ہے، کہ وہ ہے غاصب مگر یہ ”اپنے” تمھارے خوابوں کو مسخ کرکے ہماری نابودیت پہ مُہریں لگارہے ہیں

Share on
Previous article

طرحِ تجزیه و تقسیـم بلوچستـان خیانتی است بزرگ به ملت بلـوچ سرزمین بلوچستــان درطول تاریخ به مردم مقاوم بلــوچ تعلـق داشته است

NEXT article

بلــــوچ گلزميــــن ءِ انــــداز ءُ سيمســـــراں

LEAVE A REPLY