زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

MUST READ

هجوم لشکر تمدن ستیز خامنه ای و العبادی به کوردستان مستقل

هجوم لشکر تمدن ستیز خامنه ای و العبادی به کوردستان مستقل

گنجیں گوادر شُت؟

گنجیں گوادر شُت؟

جالک ءُ کلَّگاں ڈیہ ءِ پَھرءُ شان اَنت

جالک ءُ کلَّگاں ڈیہ ءِ پَھرءُ شان اَنت

از تفرقه افکنی و جنگ داخلی بین نیروهای بلوچ باید جلوگیری کنیم – آقای حیربیار مری رهبر استقلال طلب بلوچستان

از تفرقه افکنی و جنگ داخلی بین نیروهای بلوچ باید جلوگیری کنیم – آقای حیربیار مری رهبر استقلال طلب بلوچستان

دہشت گردی کا مرکز پاکستان جیسے انتہا پسند ممالک ہیں : حیر بیار مری

دہشت گردی کا مرکز پاکستان جیسے انتہا پسند ممالک ہیں : حیر بیار مری

پاکستان پنجابیوں کے مفادات کی تحفظ کے لئے بنایا گیا ہے: حیر بیار مری

پاکستان پنجابیوں کے مفادات کی تحفظ کے لئے بنایا گیا ہے: حیر بیار مری

جنگ عــرب و عجم

جنگ عــرب و عجم

شهید فدا احمدءِ تران

شهید فدا احمدءِ تران

مـاتی زبان ءِ ميـاں استمانـی روچ

مـاتی زبان ءِ ميـاں استمانـی روچ

«تپاکی زندگیں راجءِ نشان اِنت»

«تپاکی زندگیں راجءِ نشان اِنت»

چرا دولت آلمان شاهرودی را فراری داد؟

چرا دولت آلمان شاهرودی را فراری داد؟

انھیں فخر ہے کہ وہ ایک ایسے باپ کے بیٹے ہیں جنھوں نے ساری زندگی غلامی کے سامنے سر جھکانے سے انکار کیا – حیربیار مری

انھیں فخر ہے کہ وہ ایک ایسے باپ کے بیٹے ہیں جنھوں نے ساری زندگی غلامی کے سامنے سر جھکانے سے انکار کیا – حیربیار مری

کوئٹہءَ هیلته آفیسر ڈاکٹر امیر بخش بلوچءِ بیگواهیءِ بابتءَ گپ و ترانے گون ڈاکٹر کمال هان بلوچءَ

کوئٹہءَ هیلته آفیسر ڈاکٹر امیر بخش بلوچءِ بیگواهیءِ بابتءَ گپ و ترانے گون ڈاکٹر کمال هان بلوچءَ

مغربی بلوچستان میں بلوچ مسلح دستوں کے ھاتھوں ایرانی ڈرون طیارہ نشانہ بنایا گیا۔ دوسری جانب ایرانی فورسسز مشرقی بلوچستان میں داخل ھونے کے لئے پاکستانی حکام سے رابطے میں ھیں۔

مغربی بلوچستان میں بلوچ مسلح دستوں کے ھاتھوں ایرانی ڈرون طیارہ نشانہ بنایا گیا۔ دوسری جانب ایرانی فورسسز مشرقی بلوچستان میں داخل ھونے کے لئے پاکستانی حکام سے رابطے میں ھیں۔

انھیں فخر ہے کہ وہ ایک ایسے باپ کے بیٹے ہیں جنھوں نے ساری زندگی غلامی کے سامنے سر جھکانے سے انکار کیا – حیربیار مری

انھیں فخر ہے کہ وہ ایک ایسے باپ کے بیٹے ہیں جنھوں نے ساری زندگی غلامی کے سامنے سر جھکانے سے انکار کیا – حیربیار مری

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

2020-03-27 16:57:58
Share on

تمہاری مُٹھی میں کاہکشائیں تھیں کاہکشاؤں کی خوشبووں سے زمین ساری مہک رہی تھی جو کوہساروں کی بند آنکھوں پہ تم قرینے سے رفتہ رفتہ چِھڑک رہے تھے تمہارے ہاتھوں کے بخت

فن پہ تلاطم وقت کی نظر تھی تمہارے سینے کی آگ تھی

وہ جو فکر روشن سے لے کے دشت و دمن تلک پھیلتی جا رہی تھی

نزار و مدقوق، خستہ جسموں کی لاغری تک بھڑک رہی تھی

ستارے خوابوں کا روپ دھارے تمھاری آفاق جیسی آنکھوں میں تیرتے تھے

وہ خواب جن پہ تلاطم

وقت سوختہ تھا اُسے تمھاری فراری سانسوں کا سلسلہ جَھٹ سے توڑنا تھا

تلاطُم وقت کی بقا کا معاملہ تھا۔

ہمارے نازک، نحیف خوابوں کی ایسے عالَم میں حیثیت کیا رزیل پاوَر کے مکرُوہ سینٹرز کے جو مفادات کو کھَٹکتے وہ اعلی اقدار کی فلاحی ریاستوں کے عظیم خوابوں کو کیسے مٹی میں نہ ملاتے؟

وہ عقل و منطق کے فکر و فن کے سراپے کیسے نہ مسخ کرتے؟

یہود و ہندو کا تم کو ایجنٹ نہ کیوں بتاتے؟

کہ یہ تو یکسر بقا کے سودے کا معاملہ ہے کہ قوم_لاچار و بےاماں کا وجود کیا ہے؟

زمیں سے مطلب ہے طاقتوں کو

میں سوچتی ہوں وہ وقت آئے تمھارے بچے

شوان، ماہ نور، زید، نادر، ہزاروں ننھے

یتیم پھولوں کے ساتھ مل کر ہزاروں ہاتھوں سے

کاہکشائیں خرد کی روشن حسیں رِدائیں بلوچ کے غم کے نام لیواؤں،

راہبروں کی انا پرستی کی اندھی آنکھوں پہ رفتہ رفتہ چِھڑکتے جائیں تو جاکے

شائد ہمارے اندر کے پاور سینٹر کا زور ٹوٹے

ہمارے اندر کی سامراجی نوابیوں کا غرور ٹوٹے

مرا یہ ماتم تمھارے خوں کا نہیں ہے پیارو

تمھارے خوابوں کی رائیگانی کا ڈر ہے لاحق

کہ دشمن_جاں تو مارتا ہے، کہ وہ ہے غاصب مگر یہ ”اپنے” تمھارے خوابوں کو مسخ کرکے ہماری نابودیت پہ مُہریں لگارہے ہیں

Share on
Previous article

گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر حملہ کی مذمت کرتے ہیں۔ بی این ایم

NEXT article

We Strongly Condemn Pakistan for Abducting Indian Citizen, Gulbushan Yadhu! Anil Boluni

LEAVE A REPLY