زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

MUST READ

کسان سالیں بلوچ دُهتگان بی بی صورت ، سکینہ ءُ سمینہ انگت شکارپور سندهءَ قید انت – گپءُ ترانے گون یکے چا بیگواهیں بلوچ دُهتگانی ماتءَ

کسان سالیں بلوچ دُهتگان بی بی صورت ، سکینہ ءُ سمینہ انگت شکارپور سندهءَ قید انت – گپءُ ترانے گون یکے چا بیگواهیں بلوچ دُهتگانی ماتءَ

پُرامن افغانستان کی راہ میں پاکستان بڑی رکاوٹ ہے : حیربیار

پُرامن افغانستان کی راہ میں پاکستان بڑی رکاوٹ ہے : حیربیار

ہم غلام ہیں،مسخ شدہ لاشیں ملنے کے ساتھ بلوچ عورتوں پر تیزاب پھینکنے کا سلسلہ پاکستانی فوج ایجنسیوں کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہیں بلوچ قوم دوست رہنما حیربیار مری

ہم غلام ہیں،مسخ شدہ لاشیں ملنے کے ساتھ بلوچ عورتوں پر تیزاب پھینکنے کا سلسلہ پاکستانی فوج ایجنسیوں کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہیں بلوچ قوم دوست رہنما حیربیار مری

گپ و تران گون وائس فار بلوچ میسنگ پرسنزءِ وائس چیرمین واجہ قدیر بلوچءَ

گپ و تران گون وائس فار بلوچ میسنگ پرسنزءِ وائس چیرمین واجہ قدیر بلوچءَ

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران – قسمت پنجم

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران – قسمت پنجم

سید ھاشمی ریفرس کتابجاہ لس دیوانءِ نوکین گچین کاری 20 جنوريءَ بنت

سید ھاشمی ریفرس کتابجاہ لس دیوانءِ نوکین گچین کاری 20 جنوريءَ بنت

شاعر ءُ ارواه – نمیرانیں واجہ عبدالصمد امیری

شاعر ءُ ارواه – نمیرانیں واجہ عبدالصمد امیری

قلات و نوشکی میں بڑے پیمانے پہ فوجی نقل و حرکت کی اطلاع

قلات و نوشکی میں بڑے پیمانے پہ فوجی نقل و حرکت کی اطلاع

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

بلوچ لبریشن فرنٹ ءِ نیمگ ءَ شنگ بیتگیں ھالے ردا بازیں دھشت گردیں گل ماں بلوچستان ءَ زمین چنڈ ءَ اثرمند بیتگیں مردمانی کمک ءَ گُلائیش انت۔

بلوچ لبریشن فرنٹ ءِ نیمگ ءَ شنگ بیتگیں ھالے ردا بازیں دھشت گردیں گل ماں بلوچستان ءَ زمین چنڈ ءَ اثرمند بیتگیں مردمانی کمک ءَ گُلائیش انت۔

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران

بلوچ دژمنیں “سپاه قدس” بلوچ جُهدکاراں میڑینگ انت

بلوچ دژمنیں “سپاه قدس” بلوچ جُهدکاراں میڑینگ انت

اسداللہ چہ ارش ءَ رکّ اِتگ ءُ پنجگور ءَ ناشناسیں مردمانی تیرگواری ءَ سب انجنیئر بیران بوتگ

اسداللہ چہ ارش ءَ رکّ اِتگ ءُ پنجگور ءَ ناشناسیں مردمانی تیرگواری ءَ سب انجنیئر بیران بوتگ

کوردستان ءِ جنگ آزادی، دیم په دیمی گوں میان استمانی تروریسم ءُ اروپایی – امریکی سیاسی واکدارانی دوپوستی

کوردستان ءِ جنگ آزادی، دیم په دیمی گوں میان استمانی تروریسم ءُ اروپایی – امریکی سیاسی واکدارانی دوپوستی

درماندگی فاشیسم تمامیت خواه پارس

درماندگی فاشیسم تمامیت خواه پارس

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

2020-03-26 12:05:43
Share on

گل زمیں کی نَنگ پہ مٹنے والے شہیدوں کے نام اُنکے بچوں کے نام

تمہاری مُٹھی میں کاہکشائیں تھیں کاہکشاؤں کی خوشبووں سے زمین ساری مہک رہی تھی جو کوہساروں کی بند آنکھوں پہ تم قرینے سے رفتہ رفتہ چِھڑک رہے تھے تمہارے ہاتھوں کے بخت

فن پہ تلاطم وقت کی نظر تھی تمہارے سینے کی آگ تھی

وہ جو فکر روشن سے لے کے دشت و دمن تلک پھیلتی جا رہی تھی

نزار و مدقوق، خستہ جسموں کی لاغری تک بھڑک رہی تھی

ستارے خوابوں کا روپ دھارے تمھاری آفاق جیسی آنکھوں میں تیرتے تھے

وہ خواب جن پہ تلاطم

وقت سوختہ تھا اُسے تمھاری فراری سانسوں کا سلسلہ جَھٹ سے توڑنا تھا

تلاطُم وقت کی بقا کا معاملہ تھا۔

ہمارے نازک، نحیف خوابوں کی ایسے عالَم میں حیثیت کیا رزیل پاوَر کے مکرُوہ سینٹرز کے جو مفادات کو کھَٹکتے وہ اعلی اقدار کی فلاحی ریاستوں کے عظیم خوابوں کو کیسے مٹی میں نہ ملاتے؟

وہ عقل و منطق کے فکر و فن کے سراپے کیسے نہ مسخ کرتے؟

یہود و ہندو کا تم کو ایجنٹ نہ کیوں بتاتے؟

کہ یہ تو یکسر بقا کے سودے کا معاملہ ہے کہ قوم_لاچار و بےاماں کا وجود کیا ہے؟

زمیں سے مطلب ہے طاقتوں کو

میں سوچتی ہوں وہ وقت آئے تمھارے بچے

شوان، ماہ نور، زید، نادر، ہزاروں ننھے

یتیم پھولوں کے ساتھ مل کر ہزاروں ہاتھوں سے

کاہکشائیں خرد کی روشن حسیں رِدائیں بلوچ کے غم کے نام لیواؤں،

راہبروں کی انا پرستی کی اندھی آنکھوں پہ رفتہ رفتہ چِھڑکتے جائیں تو جاکے

شائد ہمارے اندر کے پاور سینٹر کا زور ٹوٹے

ہمارے اندر کی سامراجی نوابیوں کا غرور ٹوٹے

مرا یہ ماتم تمھارے خوں کا نہیں ہے پیارو

تمھارے خوابوں کی رائیگانی کا ڈر ہے لاحق

کہ دشمن_جاں تو مارتا ہے، کہ وہ ہے غاصب مگر یہ ”اپنے” تمھارے خوابوں کو مسخ کرکے ہماری نابودیت پہ مُہریں لگارہے ہیں

Share on
Previous article

ھزار گنجی بس اڈہ، اصل مسئلہ کیا ہے۔۔؟ کردگار بلوچ

NEXT article

We Strongly Condemn Pakistan for Abducting Indian Citizen, Gulbushan Yadhu! Anil Boluni

LEAVE A REPLY