زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

MUST READ

ایران کیوں بلوچ لیبریشن چارٹر کی مخالفت کرتا هے اور کس طرح بلوچ آزادی پسندوں میں اختلاف اور منشترکو پروان چڑایا

ایران کیوں بلوچ لیبریشن چارٹر کی مخالفت کرتا هے اور کس طرح بلوچ آزادی پسندوں میں اختلاف اور منشترکو پروان چڑایا

لالچ ءُ پاکستان: پت ءُ چُک یا چُک ءُ پت؟

لالچ ءُ پاکستان: پت ءُ چُک یا چُک ءُ پت؟

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون پروفیسرعبدالواحد بزدارءَ

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون پروفیسرعبدالواحد بزدارءَ

مـاتـی زبانءِ میان اُستمانـی روچ

مـاتـی زبانءِ میان اُستمانـی روچ

سیاسی کارکن سلیمان بلوچ اور دوسرے شہدا کے کاروان کو آگے لے جانے کی بھر پور صلاحیت رکھتے ہیں۔ خلیل بلوچ

سیاسی کارکن سلیمان بلوچ اور دوسرے شہدا کے کاروان کو آگے لے جانے کی بھر پور صلاحیت رکھتے ہیں۔ خلیل بلوچ

بلوچ نوجوانوں کی تحریک میں جوق در جوق شمولیت حوصلہ افزاء عمل ہے : بشیر زیب بلوچ

بلوچ نوجوانوں کی تحریک میں جوق در جوق شمولیت حوصلہ افزاء عمل ہے : بشیر زیب بلوچ

از شیخ خزعل تا شهید احمد نیسی

از شیخ خزعل تا شهید احمد نیسی

پگری گلامی – گُڈی بهر

پگری گلامی – گُڈی بهر

بولانءَ پاکستانی فوجءِ آپریشن انگت برجم انت – ریڈیو حال

بولانءَ پاکستانی فوجءِ آپریشن انگت برجم انت – ریڈیو حال

بلوچ نسل کشی میں تیزی لائی گئی ہے ، خلیل بلوچ

بلوچ نسل کشی میں تیزی لائی گئی ہے ، خلیل بلوچ

تکانسـریـں خامنه ای: ایران ٹُکُّــرٹُـکُّــربیـت

تکانسـریـں خامنه ای: ایران ٹُکُّــرٹُـکُّــربیـت

چرا کمبود آب “مسئله امنیتی” شــد؟

چرا کمبود آب “مسئله امنیتی” شــد؟

حمايـت از بزرگمـرد بلوچستــان آقای قديـربلـوچ وکاروان آزادی

حمايـت از بزرگمـرد بلوچستــان آقای قديـربلـوچ وکاروان آزادی

دشمن اصلی بلوچ ها وافغان ها پاکستان است – رهبر ناسیونالست بلوچ خیربیارمری

دشمن اصلی بلوچ ها وافغان ها پاکستان است – رهبر ناسیونالست بلوچ خیربیارمری

بلوچستــان غربـی چگونه اشغال شـــد؟

بلوچستــان غربـی چگونه اشغال شـــد؟

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

2020-03-26 12:05:43
Share on

گل زمیں کی نَنگ پہ مٹنے والے شہیدوں کے نام اُنکے بچوں کے نام

تمہاری مُٹھی میں کاہکشائیں تھیں کاہکشاؤں کی خوشبووں سے زمین ساری مہک رہی تھی جو کوہساروں کی بند آنکھوں پہ تم قرینے سے رفتہ رفتہ چِھڑک رہے تھے تمہارے ہاتھوں کے بخت

فن پہ تلاطم وقت کی نظر تھی تمہارے سینے کی آگ تھی

وہ جو فکر روشن سے لے کے دشت و دمن تلک پھیلتی جا رہی تھی

نزار و مدقوق، خستہ جسموں کی لاغری تک بھڑک رہی تھی

ستارے خوابوں کا روپ دھارے تمھاری آفاق جیسی آنکھوں میں تیرتے تھے

وہ خواب جن پہ تلاطم

وقت سوختہ تھا اُسے تمھاری فراری سانسوں کا سلسلہ جَھٹ سے توڑنا تھا

تلاطُم وقت کی بقا کا معاملہ تھا۔

ہمارے نازک، نحیف خوابوں کی ایسے عالَم میں حیثیت کیا رزیل پاوَر کے مکرُوہ سینٹرز کے جو مفادات کو کھَٹکتے وہ اعلی اقدار کی فلاحی ریاستوں کے عظیم خوابوں کو کیسے مٹی میں نہ ملاتے؟

وہ عقل و منطق کے فکر و فن کے سراپے کیسے نہ مسخ کرتے؟

یہود و ہندو کا تم کو ایجنٹ نہ کیوں بتاتے؟

کہ یہ تو یکسر بقا کے سودے کا معاملہ ہے کہ قوم_لاچار و بےاماں کا وجود کیا ہے؟

زمیں سے مطلب ہے طاقتوں کو

میں سوچتی ہوں وہ وقت آئے تمھارے بچے

شوان، ماہ نور، زید، نادر، ہزاروں ننھے

یتیم پھولوں کے ساتھ مل کر ہزاروں ہاتھوں سے

کاہکشائیں خرد کی روشن حسیں رِدائیں بلوچ کے غم کے نام لیواؤں،

راہبروں کی انا پرستی کی اندھی آنکھوں پہ رفتہ رفتہ چِھڑکتے جائیں تو جاکے

شائد ہمارے اندر کے پاور سینٹر کا زور ٹوٹے

ہمارے اندر کی سامراجی نوابیوں کا غرور ٹوٹے

مرا یہ ماتم تمھارے خوں کا نہیں ہے پیارو

تمھارے خوابوں کی رائیگانی کا ڈر ہے لاحق

کہ دشمن_جاں تو مارتا ہے، کہ وہ ہے غاصب مگر یہ ”اپنے” تمھارے خوابوں کو مسخ کرکے ہماری نابودیت پہ مُہریں لگارہے ہیں

Share on
Previous article

ھزار گنجی بس اڈہ، اصل مسئلہ کیا ہے۔۔؟ کردگار بلوچ

NEXT article

We Strongly Condemn Pakistan for Abducting Indian Citizen, Gulbushan Yadhu! Anil Boluni

LEAVE A REPLY