زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

MUST READ

اعمال شکنجه های قـرون وسطايی بر وجــود و هستــی بلـــوچ

اعمال شکنجه های قـرون وسطايی بر وجــود و هستــی بلـــوچ

شکست ایران بعنوان یک واحد سیاسی – جغرافیایی

شکست ایران بعنوان یک واحد سیاسی – جغرافیایی

واجہ شھید غلام محمد بلوچءِ آخرین تران گون گوانکءَ, واجہ ءِ اے تران 1 اپریل 2009 گرگ بوتگ

واجہ شھید غلام محمد بلوچءِ آخرین تران گون گوانکءَ, واجہ ءِ اے تران 1 اپریل 2009 گرگ بوتگ

Attack On baloch Student In Preston University Islamabad 20410308

Attack On baloch Student In Preston University Islamabad 20410308

دو دانک ” شورای دمکراسی خواهان ایران” ءِ باروا

دو دانک ” شورای دمکراسی خواهان ایران” ءِ باروا

جامشورو یونیورسٹی کا طا لب علم ساجد سراج لاپتہ

جامشورو یونیورسٹی کا طا لب علم ساجد سراج لاپتہ

اسکاٹ لینڈ اور بلوچستان – کردگار بلوچ

اسکاٹ لینڈ اور بلوچستان – کردگار بلوچ

بیگواه بوتگین کسان سالین بلوچ ورناه عبدالحقءِ کهولءَ گون ترانے

بیگواه بوتگین کسان سالین بلوچ ورناه عبدالحقءِ کهولءَ گون ترانے

گپ ءُ ترانے گون بلوچ قوم دوست رھنما واجہ حیر بیار مريءَ بلوچستانءِ نوکین جاورانی بابتءَ

گپ ءُ ترانے گون بلوچ قوم دوست رھنما واجہ حیر بیار مريءَ بلوچستانءِ نوکین جاورانی بابتءَ

راسیستی سیاست ءُ کارکِردءِ یک دَروَرے

راسیستی سیاست ءُ کارکِردءِ یک دَروَرے

جئے سندھ متحدہ محاذ کے کارکن شهید سرویچ پیرزادہ کے والد لطف علی سے گفتگو

جئے سندھ متحدہ محاذ کے کارکن شهید سرویچ پیرزادہ کے والد لطف علی سے گفتگو

بلـوچستــان ءِ آزاتــی ءِ روچ مبـارک بـات

بلـوچستــان ءِ آزاتــی ءِ روچ مبـارک بـات

Gwank.org now available for Andorid Mobile

Gwank.org now available for Andorid Mobile

گروہی سوچ اور منتشر بلوچ قوت – اداریہ

گروہی سوچ اور منتشر بلوچ قوت – اداریہ

آج تک ٹی ويءِ گپ ترانے گون بلوچ قوم دوست رھنما واجہ حیربیار مريءً

آج تک ٹی ويءِ گپ ترانے گون بلوچ قوم دوست رھنما واجہ حیربیار مريءً

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

2020-03-25 18:17:44
Share on

گل زمیں کی نَنگ پہ مٹنے والے شہیدوں کے نام اُنکے بچوں کے نام

تمہاری مُٹھی میں کاہکشائیں تھیں کاہکشاؤں کی خوشبووں سے زمین ساری مہک رہی تھی جو کوہساروں کی بند آنکھوں پہ تم قرینے سے رفتہ رفتہ چِھڑک رہے تھے تمہارے ہاتھوں کے بخت

فن پہ تلاطم وقت کی نظر تھی تمہارے سینے کی آگ تھی

وہ جو فکر روشن سے لے کے دشت و دمن تلک پھیلتی جا رہی تھی

نزار و مدقوق، خستہ جسموں کی لاغری تک بھڑک رہی تھی

ستارے خوابوں کا روپ دھارے تمھاری آفاق جیسی آنکھوں میں تیرتے تھے

وہ خواب جن پہ تلاطم

وقت سوختہ تھا اُسے تمھاری فراری سانسوں کا سلسلہ جَھٹ سے توڑنا تھا

تلاطُم وقت کی بقا کا معاملہ تھا۔

ہمارے نازک، نحیف خوابوں کی ایسے عالَم میں حیثیت کیا رزیل پاوَر کے مکرُوہ سینٹرز کے جو مفادات کو کھَٹکتے وہ اعلی اقدار کی فلاحی ریاستوں کے عظیم خوابوں کو کیسے مٹی میں نہ ملاتے؟

وہ عقل و منطق کے فکر و فن کے سراپے کیسے نہ مسخ کرتے؟

یہود و ہندو کا تم کو ایجنٹ نہ کیوں بتاتے؟

کہ یہ تو یکسر بقا کے سودے کا معاملہ ہے کہ قوم_لاچار و بےاماں کا وجود کیا ہے؟

زمیں سے مطلب ہے طاقتوں کو

میں سوچتی ہوں وہ وقت آئے تمھارے بچے

شوان، ماہ نور، زید، نادر، ہزاروں ننھے

یتیم پھولوں کے ساتھ مل کر ہزاروں ہاتھوں سے

کاہکشائیں خرد کی روشن حسیں رِدائیں بلوچ کے غم کے نام لیواؤں،

راہبروں کی انا پرستی کی اندھی آنکھوں پہ رفتہ رفتہ چِھڑکتے جائیں تو جاکے

شائد ہمارے اندر کے پاور سینٹر کا زور ٹوٹے

ہمارے اندر کی سامراجی نوابیوں کا غرور ٹوٹے

مرا یہ ماتم تمھارے خوں کا نہیں ہے پیارو

تمھارے خوابوں کی رائیگانی کا ڈر ہے لاحق

کہ دشمن_جاں تو مارتا ہے، کہ وہ ہے غاصب مگر یہ ”اپنے” تمھارے خوابوں کو مسخ کرکے ہماری نابودیت پہ مُہریں لگارہے ہیں

Share on
Previous article

گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر حملہ کی مذمت کرتے ہیں۔ بی این ایم

NEXT article

اکنش مسئولانه مردمی به درگیری بین بی۰ ال۰ اف و جیش العدل

LEAVE A REPLY