شہید شاہینہ کے قتل سے نا صرف اس کی والدہ اور بہنیں اب بے سہارا ہو گئی ہیں بلکہ بلوچستان اور خاص کر کیچ مکران ایک روایت ساز دلیر بیٹی سے بھی محروم ہو گیا ہے

MUST READ

بلوچستان سمینار اسٹوکھولم سویڈنءَ بلوچ قوم دوست رھنما حیر بیار مریءِ تران

بلوچستان سمینار اسٹوکھولم سویڈنءَ بلوچ قوم دوست رھنما حیر بیار مریءِ تران

من ءُ تو همراہ نہ ایں – حفیظ روف

من ءُ تو همراہ نہ ایں – حفیظ روف

دَرآمدیں گُشتاسبی کئے اِنت؟

دَرآمدیں گُشتاسبی کئے اِنت؟

حقیقت کچھ اور ہے رند رگام بلوچ

حقیقت کچھ اور ہے رند رگام بلوچ

شهید فدا احمدءِ تران

شهید فدا احمدءِ تران

بلوچستــان غربـی چگونه اشغال شـــد؟

بلوچستــان غربـی چگونه اشغال شـــد؟

گپ و ترانے گون بلوچ ہیومن رائٹس آرگنائزیشنءِ سروک بانک بی بی گلءَ بلوچستانءَ پاکستانی فوجی آپریشنءِ بابتءَ

گپ و ترانے گون بلوچ ہیومن رائٹس آرگنائزیشنءِ سروک بانک بی بی گلءَ بلوچستانءَ پاکستانی فوجی آپریشنءِ بابتءَ

گوانڈین ریڈیو رپورٹءِ چا تمپءَ

گوانڈین ریڈیو رپورٹءِ چا تمپءَ

فری بلوچستان موومنٹ مہم ,تمام آزادی پسند شرکت کرسکتے ہیں :حیربیار مری

فری بلوچستان موومنٹ مہم ,تمام آزادی پسند شرکت کرسکتے ہیں :حیربیار مری

خصومتِ دولتِ ایران با زبان بلوچـی و دلایلِ آن

خصومتِ دولتِ ایران با زبان بلوچـی و دلایلِ آن

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

طرح تقسیم بلوچستان خیانتی است بزرگ به ملت بلوچ

طرح تقسیم بلوچستان خیانتی است بزرگ به ملت بلوچ

بلوچستان کی آذادی کے علاوہ کسی اور نقطے پر پاکستان سے کسی قسم کے مزاکرات نہیں ہوسکتے۔ نوابزادہ حیر بیار مری

بلوچستان کی آذادی کے علاوہ کسی اور نقطے پر پاکستان سے کسی قسم کے مزاکرات نہیں ہوسکتے۔ نوابزادہ حیر بیار مری

انڈیا سے بی جی پی کے ترجمان انیل بالونی صاحب سے گفتگو – ریڈیو حال

انڈیا سے بی جی پی کے ترجمان انیل بالونی صاحب سے گفتگو – ریڈیو حال

مروچی ساؤتھ کوریاءِ بلوچ کمونیٹيءِ نیمگءَ چا بلوچستانءَ انسانی حقانی پادماليءِ خلافءَ یک زھرشانیءِ برجا دارگ بوت.

مروچی ساؤتھ کوریاءِ بلوچ کمونیٹيءِ نیمگءَ چا بلوچستانءَ انسانی حقانی پادماليءِ خلافءَ یک زھرشانیءِ برجا دارگ بوت.

شہید شاہینہ کے قتل سے نا صرف اس کی والدہ اور بہنیں اب بے سہارا ہو گئی ہیں بلکہ بلوچستان اور خاص کر کیچ مکران ایک روایت ساز دلیر بیٹی سے بھی محروم ہو گیا ہے

2020-09-10 21:09:35
Share on

شگراللہ بلوچ

 

مکران ( انتظامی لحاظ سے نہیں، تاریخی و جغرافیائی لحاظ سے ) کو بلوچستان کے دیگر علاقوں سے معتدل مزاج سمجھا جا تا ہے۔ اسکی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ دیگر علاقوں کی نسبت سخت قبائلی طرز معاشرت اور روایتی سرداری نظام سے کافی حد تک یہ آزاد تعلیمیافتہ ہے اور باقی علاقوں کے بڑے جاگیرداروں کی نسبت اس کی آبادی مختلف متوسط بلوچ قبائل پر مشتمل ہے۔ کچھ عرصہ سےگوادر میں سی پیک اور مختلف نا خوشگوار واقعات و حالات کی وجہ سے ملکی میڈیا میں اس کا نام آتا رہتا ہے۔

چند مہینوں سے مکران کے ڈویژنل ہیڈ کوارٹر اور بلوچستان کے سب سے بڑے شہروں میں سے ایک شہر تربت میں ڈکیتی کےدوران خواتین ( ملک ناز بلوچ اور کلثوم بلوچ ) کے قتل کے واقعات نے اہل علاقہ سمیت تمام بلوچوں کو ایک غیر معمولی تشویشمیں مبتلا کر دیا ہے اور نوجوان شہید حیات بلوچ کے ناحق قتل نے اس تشویش اور عوامی غیظ و غضب میں مزید اضافہ کر دیاہے۔ شہید حیات بلوچ کے واقعہ کی ابھی دھول بھی نہیں چھٹی تھی کہ 5 ستمبر کو تربت میں خاتون شاہینہ شاہین بلوچ کی قتل کاالمناک واقعہ رونما ہوا ہے۔

شاہینہ بلوچ بلوچستان اور ملک سے باہر بلوچوں میں ایک جانی پہچانی نام تھی۔ وہ بیک وقت شاعرہ، پینٹنگ آرٹسٹ، ادیبہ، خواتینکے لئے مخصوص پہلی بلوچی میگزین ”دزگہار“ (سہیلی) کی ایڈیٹر، مکران آرٹس اکیڈمی کی بانی و سر پرست، ٹی وی اینکر، ایکٹریس،ماڈل، سماجی کارکن، انسانی حقوق خاص کر خواتین کے حقوق کی علمبردار اور صنفی مساوات کے حوالے سے نہ صرف ایکمضبوط آواز تھی بلکہ اس کا عملی نمونہ بھی تھیں۔ والد کی شفقت سے محروم (اندازہ) 28 سے 30 سال عمر کی یہ لڑکی اپنی والدہاور چار بہنوں کی واحد کفیل تھی۔

 

شہید شاہینہ کے قتل سے نا صرف اس کی والدہ اور بہنیں اب بے سہارا ہو گئی ہیں بلکہ بلوچستان اور خاص کر کیچ مکران ایکروایت ساز دلیر بیٹی سے بھی محروم ہو گیا ہے۔ چشم دید گواہان اور پولیس کی جانب سے اس قتل کا الزام شاہینہ کے شوہر پرلگایا گیا ہے جس نے دو گولیاں مار کر شاہینہ کی زندگی کا خاتمہ کر دیا۔ مگر تا حال ملزم پولیس کی گرفت سے باہر ہے۔ کئی لوگ اسے”غیرت“ اور میاں بیوی کے آپسی اختلاف کا شاخسانہ قرار دے رہے ہیں۔

سوشل میڈیا میں بظاہر عوام کی اکثریت اس واقعہ پر انتہائی رنج و افسوس کا اظہار کر رہی ہے۔ ملکی اور بین الاقوامی میڈیا میںنے بھی اس واقعہ کو اپنی سرخیوں میں جگہ دی ہے۔ مگر اکثر علاقائی سماجی تنظیمیں اور تمام سیاسی پارٹیاں اس المناک واقعہ پرلب کشائی سے قاصر ہیں۔ سوشل میڈیا میں بھی سرگرم کئی شخصیات اور لوگ بھی غیر متوقع طور پر خاموش ہیں۔ گمان یہی ہےکہ وہ اس واقعہ کو ”غیرت“ کا مسئلہ قرار دے رہے ہیں۔ ایک دوست نے تو سوشل میڈیا پر اپنے ایک پوسٹ میں اس واقعہ کاذمہ دار براہ راست ”بلوچی غیرت“ کو قرار دیا ہے۔ اگر مذکورہ دوست کا الزام اور خاموش طبقہ کا جواز ”بلوچی غیرت“ ہے تواس کی تصحیح و تصدیق کے لئے بحیثیت بلوچ ہمیں بلوچ تاریخ کے جھروکوں میں جھانک کر مختلف واقعات و روایات کا جائزہلینا ہوگا۔

بلوچستان میں نام نہاد ”بلوچی غیرت“ کے نام پر آج کل جو روایت قائم ہے بلوچ تاریخ میں اس کی کوئی مثال نہیں ملتی۔ تاریخیاعتبار سے سب سے نامور بلوچ شخصیت اور بلوچوں کا سب سے طاقتور سردار چاکر اعظم جب شے مرید کی محبوبہ اور منگیتر حانیپر فدا ہوئے تو انہوں نے ایک خاتون ( سازین ) کی سازشی منصوبے کے بل بوتے پر شے مرید سے حانی کی منگنی تڑوا کر خودحانی سے نکاح کر کے اسے حاصل تو کر لیا مگر بحیثیت میاں بیوی چاکر اور حانی کے درمیان کبھی بھی ازدواجی تعلقات قائم نہیںرہے اور بلوچوں کا یہ عظیم سردار اپنی بیوی حانی کی قربت سے ہمیشہ محروم رہا۔

 

بلوچی رزمیہ شاعری میں چاکر اور حانی کے تعلقات کی تفصیلات بے مثال منظر کشی کے ساتھ موجود ہیں۔ مثلاً جب چاکر، شاہیمحل میں حانی کو تمام شاہانہ آسائشوں سے بے نیاز خیالوں میں گم اداس دیکھتی ہے تو اس سے کہتا ہے کہ ”اے حانی! تمہیں اداسہونے کی بجائے اپنی قسمت پر رشک کر نا چاہیے کہ تم عالیشان محل میں بیٹھی سونے کے انمول زیورات پہنتی ہو، نایاب قیمتیلباس اور دوپٹوں میں ملبوس ہو کر ہر طرح کے خوش ذائقہ کھانوں سے محظوظ ہوتی ہو“ ۔

چاکر کی یہ باتیں سن کر حانی انتہائی تلخ زبان اور بے باک انداز میں جواب دیتی ہوئی کہتی ہے ”چاکر! تیرے محل کی دیدار سےمیرا دل خوش نہیں ہوتا، تمہارے دیے ہوئے زیورات مجھے بچھو کی طرح ڈستے ہیں اور تمہارے لائے ہوئے شہد مجھے نیم کےپتوں سے بھی زیادہ کڑوی لگتی ہیں۔ کیونکہ میری زندگی کی تمام خوشیوں کا محور شے مرید ہے اور شے مرید کے علاوہ نہ ہی مجھےکچھ سوجھتا ہے نہ کوئی دکھتا ہے“ ۔ یہ موقف حانی ہر مکالمے میں دہراتی ہے۔

مگر اس کے باوجود بلوچ قوم کا طاقتور سردار مایوسی اور تلملاہٹ کے علاوہ کسی بھی طرح کی سختی، بندش یا تشدد کرنے سے قاصرہے۔ اور نہ ہی وہ حانی کو بد کرداری کا الزام لگاتا ہے اور نہ ہی یہ باتیں سن کر اس کی ”بلوچی غیرت جوش مار تا ہے کہ تم میریبیوی ہو کر کسی غیر و نامحرم مرد سے عشق کرتی ہو، اس لئے اب تمہیں زندہ رہنے کا حق نہیں۔ حالانکہ مختار کل سردار کے لئےایک“ نافرمان بیوی ”کو قتل کر نا کوئی مسئلہ نہیں تھا۔

 

مگر قتل یا تشدد کر نا تو دور کی بات ہے، نہ چاکر حانی پر غصہ یا سختی کر تا ہے اور نہ طلاق دے دیتا۔ بلکہ وہ حانی کے موقف کااحترام کر تا ہے۔ اگر چاکر اعظم کے اس طرز عمل کا موازنہ موجودہ ”بلوچی غیرت“ سے کیا جائے تو پھر (معذرت کے ساتھ ) چاکر اعظم تو پھر بہت بڑا بے غیرت تھا۔ اور اب ہم ان سے زیادہ غیرت مند ہو گئے ہیں۔ مگر بلوچ تاریخ میں ”اس بےغیرتی“ کا مرتکب صرف چاکر شیہک (چاکر ولد شیہک) نہیں ہوئے ہیں۔

کیونکہ جب بلوچ تاریخی کردار بیبگر ( بیورغ ) اپنی محبوبہ گراناز کو بھگا کر ایک دشمن قبیلہ کے یہاں پناہ لیتا ہے تو دشمن قبیلہ نہصرف ان کو انتہائی عزت و احترام کے ساتھ اپنے یہاں ٹھہراتا ہے بلکہ لڑکی اور لڑکے کے خاندان کو باقاعدہ مطلع کر کے اپنےپاس آنے کی التجا کر تا ہے اور جب گراناز اور بیبگر کے سرپرست اپنے عزیزوں کے ساتھ وہاں پہنچتے ہیں تو دونوں خاندان کیباہمی رضا مندی سے انتہائی خوشگوار ماحول میں گراناز اور بیبگر کا نکاح کرایا جا تا ہے اور باعزت طریقے سے ان کی رخصتی کر دیجاتی ہے۔

قابل غور بات یہ ہے کہ نہ ہی گراناز کے خاندانوں والوں کی ”بلوچی غیرت“ جوش مارتی ہے کہ وہ اپنی لڑکی کی حوالگی یا قتل کامطالبہ کریں اور نہ ہی بیبگر کا خاندان اس ”بھاگی ہوئی بد کردار لڑکی“ کو کسی صورت اپنے خاندان و قبیلہ کی بہو اپنانے سے انکارکرتے ہیں! اسی طرح جب مہناز پر جھوٹا لانچن لگا کر اس کی پاکدامنی پر سوال اٹھایا جاتا ہے اور مہناز کے شوہر شہداد کو یہ باورکرایا جا تا ہے کہ تمہاری بیوی بدچلن ہے، تو شہداد کی ”بلوچی غیرت“ میں بھی اتنا ابال نہیں آ تا ہے کہ وہ اپنی بیوی کا سر قلم کردے۔

بلوچی لوک عشقیہ داستانوں اور تاریخی واقعات میں یہ انتہائی اہم اور غور طلب بات ہے کہ ایک بھی ایسا واقعہ یا مثال موجودنہیں ہے کہ جس میں کسی لڑکی کو محبت کر نے کی پاداش میں قتل کر دیا گیا ہو یا غیرت کے نام پر کسی عورت کا خون بہا یا گیاہو۔ ( اگر میں غلط ہوں تو درستگی کا طلب گار ہوں ) تو پھر کیا اس کا مطلب یہ ہے کہ پرانے وقتوں کے یہ بلوچ شخصیات بےغیرت تھے جو کسی غلط فہمی، الزام یا شک کی بنیاد پر اور کسی خطا پر غیرت کے نام پر اپنی بیٹی، بہن، بیوی اور بہو کو قتل نہیںکرتے تھے؟

یا جو غیرت کے ایسے اظہار کے خلاف ہیں جو عورت کے خون بہانے کا محتاج ہو وہ بے غیرت ہیں؟ خدا نخواستہ اگر روایتیغیرت کے حوالے سے کوئی حقیقی مسئلہ پیش آئے تو اس کا واحد حل قتل ہے؟ کیا ایسے مسئلے کا کوئی ایسا حل نہیں ہے کہ جوعزت بچی ہے وہ بھی قائم رہے اور مزید غلطی و بد نامی سے بچا جا سکے؟ بلوچ معاشرے میں اب اس پر بحث ہونی چاہیے کہکچھ لوگوں نے ”غیرت داری“ کا جو معیار اپنا یا ہوا ہے یا اپنایا جا رہا ہے کیا بلوچ تاریخی میں اس کا کوئی جواز ہے؟

کیا یہ واقعی ”بلوچی غیرت“ ہے؟ کیا دیگر کئی روایات کے ساتھ ساتھ ”غیرت مندی“ کا مروجہ روایت بھی ہم دیگر قوموں سے تونہیں لے رہے ہیں؟ ملکی میڈیا کے ایسے نغمے کہ ”ہم مائیں، ہم بہنیں، ہم بیٹیاں، قوموں کی عزت ہم سے“ جیسے بیانیہ سے ہم اثر تونہیں لے رہے ہیں جو انسانی وجود کے بجائے عورت کو صرف غیرت کا استعارہ قرار دیتا ہے؟

بلوچوں کی بہت بڑی آبادی ایران کے زیر انتظام بلوچستان میں بھی موجود ہے۔ جہاں مذہب کی آڑ میں انتہائی سخت رجحانات وقانونی بندشوں کے باوجود بلوچ عورت سماجی زندگی میں اور معاشی و ثقافتی طور پر زیادہ آزاد اور خود مختار ہے۔ مگر وہاں ”بلوچیغیرت“ کا ایسا مظاہرہ نظر نہیں آ تا جو سرحد کے اس پار نظر آ تا ہے۔ انبیا اور صحابہ کرام کی سر زمین عرب مملکت سلطنت آفعمان میں عربوں کے بعد دوسری سب سے بڑی آبادی بلوچوں کی ہے جو آج بھی اپنی بلوچی زبان و روایات اور خونی رشتوں سےجڑے ہوئے ہیں، مگر سلطنت عمان کے بلوچوں کی غیرت میں بھی اتنا ابال نہیں آتا جتنا یہاں

 

نام نہاد ملکی جدید و مذہبی تعلیم اور شہری ماحول سے دور قصبوں اور دیہی علاقوں میں رہائش پذیر بلوچ مرد و زن بغیر کسی چاردیواری کے اور بغیر کسی برقعہ یا نقاب کے ایک ہی محلہ میں اکٹھے رہتے ہیں۔ ہر کسی کو دوسرے کے گھر میں راہ ہوتی ہے، کوئیکسی سے پردہ نہیں کر تا ( البتہ روایتی پرائیویسی کا خاص خیال رکھا جا تا ہے۔ خواتین اور بالغ بچیاں ننگے سر ہو نا عیب سمجھتیہیں ) ، روایتی لباس میں ملبوس چادر نما دوپٹے پہنے بلوچ خواتین ازل سے مردوں کے شانہ بشانہ کھیتوں میں کام کرتی، لکڑیاں کاٹتی،بکریاں چراتی اور خوشی و غم کے تمام موقعوں میں یکساں شریک ہوتی ہیں، وہاں غیرت کا کوئی مسئلہ نہیں۔

مگر ذرائع آمدنی کے جدید ذرائع استعمال کرنے سے اور دفتر کی مخلوط ماحول میں کام کرنے اور پڑھنے سے غیرت کو خطرہ لاحق ہوسکتا ہے۔ جن علاقوں میں گھروں کو چار دیواریوں کے حصار میں بند کر دیا گیا ہے اور یہ فصیلیں اونچی سے اونچی کر دی گئی ہیںاور ان حرم نما گھروں میں خواتین کو بند کر دیا جاتا ہے، ایسے علاقوں میں ذرہ ذرہ سی بات پر لوگوں کی غیرتوں میں ابال آتا رہتاہے اور ان کی عزتیں ہمیشہ خطرے میں رہتی ہیں۔ مسلح پہریداروں کے حصار میں بیٹھے اور اپنے مونچھوں کو تاؤ دیتے کئیجرائم پیشہ افراد اور تمام اخلاقیات و کردار سے محروم خود ساختہ میروں کی تمام غیرت اور عزت داری کا بوجھ زندان نما گھروںمیں محصور عورتوں کے نازک کاندھوں پر ہے۔

احساس کمتری، خوف و خدشات اور دیگر کئی ذہنی پیچیدگیوں کے شکار ایسے مردوں کی ذہنی حالت کا خمیازہ گھریلو ناچاقی، ذہنی وجسمانی تشدد، بلاجواز پابندیوں اور قتل کی صورت میں خواتین کو بھگتنا پڑ تا ہے۔ خوف و خدشات سے بھری اور سکون سے محروماذیت ناک زندگی سے نجات پانے کے لئے ضروری ہے کہ بحیثیت انسان عورت کی پسند و ناپسند، جذبات، احساسات وخیالات اور اس کی وجود اور جداگانہ شناخت کو تسلیم کیا جائے اور انسانیت کے منصفانہ اصولوں پر مبنی معاشرے کی تشکیل کےلئے ضروری ہے کہ مرد انسان بن کر رہے۔ اس لئے ضروری ہے کہ ہم اپنے بچوں کو ذاتی و خاندانی زندگی میں اور اسکولوں کیسطح پر صنفی مساوات کا درس لازمی طور پر دیں اور عملی مظاہرہ بھی کریں۔

میں خود بلوچ ہوں اور بلوچستان کے ایک دیہی علاقے میں بلوچ روایات کی چھتر چھایا میں پرورش پائی ہے (اور شاید کئی بلوچوںسے زیادہ بلوچ تاریخ اور روایات سے آگاہ ہوں اور ممکن حد تک عمل کر نے کی کوشش کر تا ہوں ) ۔ اس لئے اتنا آزاد خیالنہیں ہوں کہ مادر پدر آزادی کا مطالبہ کروں یا اس کے حق میں ہوں۔ مگر اتنا جانتا ہوں کہ جس نام نہاد غیرت کے نام پر شہیدشاہینہ بلوچ کا قتل ہوا ہے وہ ہر گز ”بلوچی غیرت“ نہیں ہے اور نا ہی اس کا کوئی جواز بنتا ہے۔

کسی انسانی وجود کو مکمل طور پر نظر انداز کر کے اسے اپنے تابع کرنے کی کوشش کر نا اور ناکامی کی صورت میں قتل کرنا غیرتنہیں ہے اور یہ نا دینداری ہے، نا انسانیت ہے اور نہ ہی مردانگی ہے۔ جس طرح دور جاہلیت میں یورپ کے محقق، ادیب،دانشور اور لکھاریوں نے اپنی قدیم تہذیب و تمدن اور روایات کے مثبت اور روشن پہلوؤں کو پھر سے دریافت کر کے جہالتبھری پاپائیت کو للکار کر نشات ثانیہ کی بنیاد رکھی تھی اور جس کے بطن سے ایک منصفانہ و انسان دوست جمہوری معاشرے کاقیام ممکن ہوا، بالکل اسی طرح اگر ہم بلوچ صنفی مساوات اور خواتین کی حیثیت سمیت مثبت اقدار اور درست اخلاقیات کےحوالے سے قدیم بلوچ روایات اور تاریخ سے بہت کچھ حاصل کر سکتے ہیں۔ ”بلوچی غیرت“ کے صحیح تعین کے ساتھ ساتھ بلوچنشاط ثانیہ کی بنیاد بھی رکھ سکتے ہیں۔

 

شگراللہ بلوچ 

Share on
Previous article

شھمیر اکبرخان مدامی نمیران انت

NEXT article

ایران: نوجوان ریسلر نوید افکاری کی سزائے موت پر عمل درامد

LEAVE A REPLY