قومی اشتراک عمل : آزادی پسند تنظیموں سے رابطے کیلئے باقاعدہ کمیٹی تشکیل دی ہے : حیربیار مری

MUST READ

آیاعربستان سعودی بہ منابع طبیعی ومعادنِ بلوچستان چشم دوخته است؟

آیاعربستان سعودی بہ منابع طبیعی ومعادنِ بلوچستان چشم دوخته است؟

شهید حیات بیوسءِ شعرے آئی وتی توارءَ

شهید حیات بیوسءِ شعرے آئی وتی توارءَ

مغربی بلوچستانءِ جهدکار کمال ناروئیءِ گواستگین تران گون ریڈیو گوانکءَ

مغربی بلوچستانءِ جهدکار کمال ناروئیءِ گواستگین تران گون ریڈیو گوانکءَ

بلوچ ایں ما بلوچ ایں – خطاب به نظام استبدادی جهموری اسلامی

بلوچ ایں ما بلوچ ایں – خطاب به نظام استبدادی جهموری اسلامی

گپ وتران گون شہید محمد اکبر خان بگٹی ء 20060402 گون ریڈیو بلوچی ایف ایم

گپ وتران گون شہید محمد اکبر خان بگٹی ء 20060402 گون ریڈیو بلوچی ایف ایم

آج تک ٹی ويءِ گپ ترانے گون بلوچ قوم دوست رھنما واجہ حیربیار مريءً

آج تک ٹی ويءِ گپ ترانے گون بلوچ قوم دوست رھنما واجہ حیربیار مريءً

بولان سے بلوچ خواتین کی اغواء ، پاکستان بنگلہ دیش کی تاریخ دہرا رہا ہے: فرزانہ مجید بلوچ

بولان سے بلوچ خواتین کی اغواء ، پاکستان بنگلہ دیش کی تاریخ دہرا رہا ہے: فرزانہ مجید بلوچ

بالاچ” مبارک قاضی “

بالاچ” مبارک قاضی “

Independence Movement of Balochistan-

Independence Movement of Balochistan-

تجاربی خونین از مذاکرات با اشغالگران

تجاربی خونین از مذاکرات با اشغالگران

میان اُستمانی سیاست ءُ بلوچ راجی جنز ندکار: سعید بلوچ

میان اُستمانی سیاست ءُ بلوچ راجی جنز ندکار: سعید بلوچ

مـاتی زبانانی جھانی روچ ءُ شھدیں بلوچی

مـاتی زبانانی جھانی روچ ءُ شھدیں بلوچی

سویڈن میں 1998 کو بلوچستان میں چاغی کے پہاڑوں میں جوہری ہتھیاروں کا تجربہ کے خلاف آگاہی مہم

سویڈن میں 1998 کو بلوچستان میں چاغی کے پہاڑوں میں جوہری ہتھیاروں کا تجربہ کے خلاف آگاہی مہم

اپوزیسیون مرکزگرای پارس چه در سر دارد؟

اپوزیسیون مرکزگرای پارس چه در سر دارد؟

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون بانک کارینا جهانیءَ

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون بانک کارینا جهانیءَ

قومی اشتراک عمل : آزادی پسند تنظیموں سے رابطے کیلئے باقاعدہ کمیٹی تشکیل دی ہے : حیربیار مری

2020-03-26 09:21:23
Share on

لندن / بلوچ قوم دوست رہنما حیر بیا ر مری نے اپنے بیان میں بلوچ قوم کو قومی ہم آہنگی اور اشتراک عمل کے حوالے سے آگاہی دیتے ہوئے کہا کہ خطے کے بدلتے ہوئے حالات ایک آزاد بلوچستان کی تشکیل ممکن بناسکتے ہیں بشر طیکہ بلوچ قوم اپنی سرزمین پر طاقت کے طور پر ابھر کر سامنے آئے۔ بلوچ سرزمین پر بلوچ قومی طاقت منوانے کے لیے ضروری ہے کہ سب اپنی کمزوریوں کو دور کرکے غلطیوں کو مان کر نئے سرے سے قومی مفادات کے تحت مشترکہ ڈسپلین پر اصولی اشتراک کریں۔ انہوں نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ موجودہ جدوجہد کی شروعات سے پہلے ہم نے باقاعدہ اپنی منزل کا تعین کیا تھا کہ ہمیں بلوچ سرزمین کو پھر سے آزادی دلانا ہے۔ ہم ہمیشہ سخت اصول اور ڈسپلین کے تحت کام کرتے رہے کیونکہ ہم اس حقیقت کو جانتے ہیں کہ جس طرح قانون کے بغیر ملک و ریاست آنارکی کا شکار ہوسکتے ہیں بلکل اسی طرح ڈسپلین اور اصولوں کے بغیر جدوجہد انشار اور کمزروی کا شکار ہوجاتے ہیں۔ بے اصولی اور کمزور ڈسپلین نے موجودہ تنظیموں کو کمزور کیا اور اس کی وجہ سے جدوجہد متوقع نتائج نہیں دے سکا ان ہی کمزوریوں کو دور کرنے کے لیے ہم نے کسی بھی ذاتی، گروہی، جماعتی یا تنظیمی مفادات سے بالا تر ہوکر بلوچ قومی مفادات اور بلوچ وطن کی آزادی کو مد نظر رکھ کر اصولی اشتراک کے لیے دو شرائط بلوچ قوم اور تمام تنظیموں کے سامنے رکھے۔ آزاد بلوچستان کے لیے کسی بھی موثر اور حقیقی اشتراک عمل کے آغاز کے لیے یہ شرائط ذاتی و گروہی مفاد کی حوصلہ شکنی اور مجموعی بلوچ مفادات کی حوصلہ افزائی کریں گے۔ اسی مقصد کو آگے لیجانے کے لیے ہم نے دوستوں پر مشتمل با قاعدہ کمیٹی تشکیل دی ہے جو کہ اعتماد بحالی اور ان دو شرائط پر بات چیت کریں گے تاکہ اس کے بعد قومی مفادات کے تحت اشراک عمل کا آغاز ہوسکے ۔ تشکیل شدہ کمیٹی بہت جلد آزادی پسند تنظیموں سے رابطہ کر ے گی اور اس حوالے جو بھی پیش رفت ہوگی اس سے بلوچ قوم کو آگاہ کیا جائے گا۔


Share on
Previous article

پاکستان چین کی مفادات کی خاطر بلوچوں کا بے رحمی سے قتل عام کررہا ہے: حیر بیار مری

NEXT article

بيست و هفتم مارس روزی سياه در تاريخ بلوچستــان – محمــد کـريــم بلــوچ

LEAVE A REPLY