لاپتہ بلوچ اسیران ،شہدا کے بھوک ہڑتالی کیمپ کو 1543ءدن گذر گئے

MUST READ

اَلاَحـوازالعــربی پاد آتکگ

اَلاَحـوازالعــربی پاد آتکگ

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران – قسمت چهارم

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران – قسمت چهارم

انڈیا میں بلوچستان پر سیمینار بلوچ رہنما حیربیار مری کا پیغام

انڈیا میں بلوچستان پر سیمینار بلوچ رہنما حیربیار مری کا پیغام

مـاتی زبانانی جھانی روچ ءُ شھدیں بلوچی

مـاتی زبانانی جھانی روچ ءُ شھدیں بلوچی

طرح تقسیم بلوچستان خیانتی است بزرگ به ملت بلوچ

طرح تقسیم بلوچستان خیانتی است بزرگ به ملت بلوچ

بلوچ بواگءِ جرمءَ گون ما اے وڑیں سلوک کنگ بواگءَ انت – بلوچ نرسنگ کمیٹی

بلوچ بواگءِ جرمءَ گون ما اے وڑیں سلوک کنگ بواگءَ انت – بلوچ نرسنگ کمیٹی

بلــوچ هُـــژّار

بلــوچ هُـــژّار

پاکستان عالمی قوانین کی خلاف ورزیوں کا مرتکب ہورہا ہے

پاکستان عالمی قوانین کی خلاف ورزیوں کا مرتکب ہورہا ہے

بيست و هفتم مارس روزی سياه در تاريــخ بلوچستــــان

بيست و هفتم مارس روزی سياه در تاريــخ بلوچستــــان

بلوچستان میں اسلامی ایٹمی تجربات کے اثرات نے چاغی میں 200 سے زائد اونٹوں کی جان لی

بلوچستان میں اسلامی ایٹمی تجربات کے اثرات نے چاغی میں 200 سے زائد اونٹوں کی جان لی

اول ما بلوچیں، پیش چا ایشیءَ مسلمان ببئیں – حافظ عبدالغفار نقشبندی

اول ما بلوچیں، پیش چا ایشیءَ مسلمان ببئیں – حافظ عبدالغفار نقشبندی

سویڈش پارلیمنٹءَ واجہ حیر بیار مريءِ بلوچستانءً انسانی حقانی لگتماليءِ پدر کنگءِ تران

سویڈش پارلیمنٹءَ واجہ حیر بیار مريءِ بلوچستانءً انسانی حقانی لگتماليءِ پدر کنگءِ تران

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ – بخش پنجـم

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ – بخش پنجـم

سویڈش شوشلیٹ پاڑٹی کے کریسٹوفر لونڈ بیری 10دسمبر2015 کو گوتنبرگ میں بولان کے بلوچ خواتین کی پاکستانی فورسز کی توسط سے اغواه کے خلاف مظاهرہ سے خطاب کررهے هیں

سویڈش شوشلیٹ پاڑٹی کے کریسٹوفر لونڈ بیری 10دسمبر2015 کو گوتنبرگ میں بولان کے بلوچ خواتین کی پاکستانی فورسز کی توسط سے اغواه کے خلاف مظاهرہ سے خطاب کررهے هیں

شاعر ءُ ارواه – نمیرانیں واجہ عبدالصمد امیری

شاعر ءُ ارواه – نمیرانیں واجہ عبدالصمد امیری

لاپتہ بلوچ اسیران ،شہدا کے بھوک ہڑتالی کیمپ کو 1543ءدن گذر گئے

2020-03-31 15:26:24
Share on

وائس فار بلوچ مسنگ پرسنز
31-03-2014

لاپتہ بلوچ اسیران ،شہدا کے بھوک ہڑتالی کیمپ کو 1543ءدن گذر گئے۔بھوک ہڑتالی کیمپ میں اظہار یکجہتی کرنے والوں میں جسقم اور جسمم کا ایک وفد لاپتہ بلوچ ،مسخ شدہ لاشوں کے لواحقین سے اظہار ہمدردی کی اور بھر پور تعاون کااظہار کیا اور اُنہوں نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ انسانی حقوق کے داعی حلقے حکمرانوں کے دعووں پر یقین کرتے ہوئے نظر نہیں آتے۔بلوچستان اور سندھ میں سیاسی رہنماﺅں کو کارکنوں سمیت مختلف شعبہ ہانے زندگی سے تعلق رکھنے والے بلوچوں اور سندھیوں کے اغواءگمشدگیوں اور قتل کر کے جلا دیتے ہیں ۔یا ویرانوں میں پھینکنے کا مسئلہ اب دنیا بھر کی نظروں میں آچکا ہے ۔اور بین الاقوامی سطح پر امریکہ کی جانب سے اپنی جاری کردہ سالانہ رپورٹ میں بھی بلوچستان اور سندھ میں انسانی حقوق کی پامالی کا تذکرہ کرتے ہوئے تشویش کا اظہار کیا گیا ہے ۔وفد سے ماما قدیر بلوچ نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تاریخ عالم شاہد ہے کہ طاقت کے زور پر آج تک کوئی سیاسی ،اقتصادی مسئلہ حل نہیں ہوا ہے اس لئے بلوچستان میں طاقت کا استحال جلتی پر تیل چھڑکنے کے مترادف ثابت ہورہا ہے ۔حکمران بھی اس ٹھوس حقیقت سے کلی طور پر آگاہ ہیں ۔مگر چونکہ وہ بلوچ مسئلہ کے حل کو بلوچستان میں پیوست اپنے مفادات کے لئے زہر قاتل سمجھتے ہیں ۔اس لئے انہیں یہ پالیسی اختیار کرنی پڑتی ہے۔پاکستان میں جموریت ہو یا آمیریت اس کے بلوچستان پر اثرات کیساں رہے ہیں۔اگر چہ انتخابی جمہوری ادوار میں بلوچ سیاسی رہنماوں و کارکنوں کی گرفتاریوں اغواءاور مبینہ ماورائے عدالت قتل اور فورسز کی کاروائیوں کے واقعات کو قرار دیا جاتا ہے ۔جبکہ یہ تاثر عام ہے کہ آمریت سے ذیادہ پی پی پی کے پہلے جمہوری دور میں کئے گئے وسیع فوجی آپریشن اور بڑے پیمانے پر بلوچوں کے جانی زیاں میں دیکھا جا سکتا ہے کہا جا تا ہے اس طرح مشرف کی آمریت میں بلوچستان میں فوجی آپریشن اور اغواء،گمشدگیوں کا آغاز ہوا لیکن پی پی پی کی جمہوری حکومت میں جبرو استبداد کی انسانیت سوز مثالیں سابقہ آمرانہ دور سے بھی بڑھتی ہوئی نظر آتی ہیں۔پہلے مشرف دور میں سیاسی رہنماﺅں و کارکنوں کو اغواءکر کے صرف لاپتہ کیا جاتا تھا ۔اب ان کی تشدد زدہ اور گولیوں سے چھلنی مسخ شدہ لاشیں ویرانوں میں پڑی ملتی ہیں ۔جبکہ اغواءاور گمشدگیوں میں بھی اضافہ ہو گیا ہے ۔یہ کیفیت ظاہر کرتی ہے کہ بلوچستان کے بارے میں آمراور جمہوریت کے داعی حکمرانوں کے رویے میں کوئی تفاد نہیں ہے ۔اس رویے کا آج کے بلوچستان میں نمایاں اظہار مختلف واقعات ،سانحات کی صورت میں دیکھا جاسکتا ہے ۔خاص طور پر لاپتہ بلوچوں کی مسخ شدہ لاشوں کا سلسلہ رکنے کا نام نہیں لے رہا۔پر اغواءلاش اور کاروئی کے بعد بلوچ قوم میں حکمرانوں کے خلاف نفرت ،انتقام کی فصل مزید بلند ہو رہی ہے ۔لاپتہ افراد کا مسئلہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ مزید طوالت اور سنگینی اختیار کرتا جا رہا ہے ۔جس سے متاثرہ لواحقین کے کرب اور غم میں بے پناہ اضافہ ہوگیا ہے ۔خاص طور پراغواءکر کے لاپتہ کیئے جانے والے مسخ شدہ لاشوں کی صورت میں بازیابی نے لواحقین کر مزید سکون اور وسوسوں کا شکار کر دیا ہے۔
ما ما قدیر بلوچ وائس چیئر مین مسنگ پرسنز

 


Share on
Previous article

بلوچستان ءِ پلین شهیدان ءَ هزاران سلام

NEXT article

شماری ازترفنـدهای اشغالگـران برای حفظ خط مرزی ژنرال ” گـُلد سميـت “

LEAVE A REPLY