نواب مری کو بھی کاہان کوہستان مری لے جانے کے بجائے نیوکاہان کوئٹہ میں اپنے فکری ساتھیوں کے قبرستان میں سپرد خاک کیا جائے۔حیربیار مری

MUST READ

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون پروفیسرصبوربلوچءَ

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون پروفیسرصبوربلوچءَ

پگری گلامی – گُڈی بهر

پگری گلامی – گُڈی بهر

تمپ و گومازیء پاکستانی فوجی آپریشنء بابتء بلوچ ہیومن راٹس آرگنائزیشن ء سروک بی بی گل بلوچء گو ن گپ تران

تمپ و گومازیء پاکستانی فوجی آپریشنء بابتء بلوچ ہیومن راٹس آرگنائزیشن ء سروک بی بی گل بلوچء گو ن گپ تران

بلـــوچ گلزميــــن ءِ انــــداز ءُ سيمســـراں

بلـــوچ گلزميــــن ءِ انــــداز ءُ سيمســـراں

شکست ایران بعنوان یک واحد سیاسی – جغرافیایی

شکست ایران بعنوان یک واحد سیاسی – جغرافیایی

مشکے میں فوجی آپریشن

مشکے میں فوجی آپریشن

گنجیں گوادر شُت؟

گنجیں گوادر شُت؟

Truck hits marchers of Long March, two injured

Truck hits marchers of Long March, two injured

غیر فطری اتحادوں سے بکھرتی شیرازہ – اداریہ

غیر فطری اتحادوں سے بکھرتی شیرازہ – اداریہ

بلوچستان سمینار اسٹوکھولم سویڈنءَ پروفیسر ڈاکٹر مصطفےءِ تران

بلوچستان سمینار اسٹوکھولم سویڈنءَ پروفیسر ڈاکٹر مصطفےءِ تران

اپوزیسیون مرکزگرای پارس چه در سر دارد؟

اپوزیسیون مرکزگرای پارس چه در سر دارد؟

بهارت کا بلوچ سیاسی کارکنوں کو سیاسی پناه دینا زیر غور هے – بی جے پی رهنما انیل بالونی

بهارت کا بلوچ سیاسی کارکنوں کو سیاسی پناه دینا زیر غور هے – بی جے پی رهنما انیل بالونی

حمید صمصام نمونه بارز یک فاشیست ملی ـ مذهبی

حمید صمصام نمونه بارز یک فاشیست ملی ـ مذهبی

گلزمیـن ءِ هَنــد ءُ دمَگانــی هالَه ئیــں نـام

گلزمیـن ءِ هَنــد ءُ دمَگانــی هالَه ئیــں نـام

ہم غلام ہیں،مسخ شدہ لاشیں ملنے کے ساتھ بلوچ عورتوں پر تیزاب پھینکنے کا سلسلہ پاکستانی فوج ایجنسیوں کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہیں بلوچ قوم دوست رہنما حیربیار مری

ہم غلام ہیں،مسخ شدہ لاشیں ملنے کے ساتھ بلوچ عورتوں پر تیزاب پھینکنے کا سلسلہ پاکستانی فوج ایجنسیوں کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہیں بلوچ قوم دوست رہنما حیربیار مری

نواب مری کو بھی کاہان کوہستان مری لے جانے کے بجائے نیوکاہان کوئٹہ میں اپنے فکری ساتھیوں کے قبرستان میں سپرد خاک کیا جائے۔حیربیار مری

2020-03-26 16:08:39
Share on

نواب مری کی جسدکا بین الاقوامی ماہرین سے معائنہ کرا کر موت کے اسباب معلوم کئے جائیں،
نواب مری کو بھی کاہان کوہستان مری لے جانے کے بجائے نیوکاہان کوئٹہ میں اپنے فکری ساتھیوں کے قبرستان میں سپرد خاک کیا جائے۔حیربیار مری
11جون2014
(ہمگام نیوز)بلوچ قوم دوست رہنما حیربیار مری نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ ہمارے ساتھیوں کا فیصلہ ہے کہ نواب مری کو شہدا قبرستان نیوکاہان کوئٹہ میں سپرد خاک کیا جائے ۔ پاکستانی آرمی نواب مری کی جسد کو کوہستان مری کے کاہان میں لے جانے کی تیاری کر رہا ہے تاکہ وہ نواب مری کے تدفین کے آڑ میں وہاں پر ڈیرہ ڈال کر بلوچوں کے خلاف آپریشن کو مزید تیز کریں انہوں نے کہا کہ پاکستانی آرمی نے کاہان شہر کو گزشتہ دس سالوں میں بمباری کر کے کافی نقصان پہنچایا جس کی وجہ سے کاہان شہر سے لوگوں نے نقل مکانی کی اور اب کاہان تقریبا خالی ہے انہوں نے نہ صرف شہر کو بلکہ ہمارے آباواجداد کے قبرستان کو بھی نقصان پہنچایا ہے، کاہان میں پاکستانی فوج کی چھاونی کو بھی روڈنہ ہونے کی وجہ سے ہیلی کاپٹروں کے زریعے راشن پہنچایا جاتاہیں اب وہ نواب مری کے تدفین کی آڑ میں پاکستان آرمی اپنے لیے راستہ بنانیکی کوشش کرے گا اور ہم نہیں چاہتے کہ ان حالات میں پاکستانی آرمی نواب مری کو کاہان کوہستان مری میں لے جاکر دفن کرے۔ حیربیار مری نے کہا نواب مری گزشتہ جمعے کے روزسے ایک نجی ہسپتال کے آئی سی یو وارڈ میں تھے لیکن انھیں کل آئی سی یو سے نکال کر نارمل وارڈ میں منتقل کیا گیا اور ہمیں یہی کہا گیا کہ اب ان کی طبیعت بہتر ہے لیکن آج ان کی اچانک وفات کی خبر ہمیں دی گئی ، اس سے اس بات کو تقویت مل رہی ہے کہ اس میں پاکستان کی کارستانی کو خارج ازامکان قرار نہیں دیا جاسکتا ہے اس لیے پاکستانی آرمی چاہتی ہے کہ نواب مری کے جسد کو وہ کاہان کوہستان مری میں لے جائیں تاکہ وہاں کوئی بین الاقوامی ماہرنواب مری کی جسد کی معائنہ کرنے کے قابل نہ ہوں۔ ہم چاہتے ہیں کہ انھیں دفن کرنے سے پہلے بین الاقوامی ماہرین سے ان کی موت کے اسباب جان سکیں اس لیے بھی کوئٹہ تدفین کے لیے موزوں ہے۔حیربیار مری نے کہا چونکہ نواب مری کا فکر قومی آزادی تھا اور نیوکاہان کوئٹہ شہدا قبرستان میں جو شہدا دفن ہیں انہوں نے بھی اس قومی فکر اور آزادی کے لیے اپنی جانیں قربان کر دی ہیں، لہذ ا نواب مری کو بھی کاہان کوہستان مری لے جانے کے بجائے نیوکاہان کوئٹہ میں اپنے فکری ساتھیوں کے قبرستان میں سپرد خاک کیا جائے۔

Share on
Previous article

بلوچ نوجوانوں سے اپیل ھے کہ وہ بلوچ رائٹس کے تحت وہ اس ریاستی جرم کے خلاف آواز بلند کریں

NEXT article

انھیں فخر ہے کہ وہ ایک ایسے باپ کے بیٹے ہیں جنھوں نے ساری زندگی غلامی کے سامنے سر جھکانے سے انکار کیا – حیربیار مری

LEAVE A REPLY