گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر حملہ کی مذمت کرتے ہیں۔ بی این ایم

MUST READ

ریڈیو گوانکءِ گپ و ترانے گون شهید غلام محمد بلوچءَ چا تربتءِ تهانہءَ 25 ستمبر 2007 ءَ رند چا آئیءِ بیگواهیءَ تربتءَ تهانہءِ یآرگ بوت هما درگت ما آئیءِ بیگواهیءِ حال چا آئیءَ جست کت

ریڈیو گوانکءِ گپ و ترانے گون شهید غلام محمد بلوچءَ چا تربتءِ تهانہءَ 25 ستمبر 2007 ءَ رند چا آئیءِ بیگواهیءَ تربتءَ تهانہءِ یآرگ بوت هما درگت ما آئیءِ بیگواهیءِ حال چا آئیءَ جست کت

ایرانی حکومت بلوچ ورنا هان سوریہ ءِ جنگءَ دیم دیگ انت – ریڈیو حال

ایرانی حکومت بلوچ ورنا هان سوریہ ءِ جنگءَ دیم دیگ انت – ریڈیو حال

سپاه پاسـدارانءِ تروریستی ٹولـی

سپاه پاسـدارانءِ تروریستی ٹولـی

گپ و ترانے گون بلوچ جهدکار واجه عبدالستار پُردلیءِ چا اوغانستانءَ بلوچ جیڑاهانی سرا

گپ و ترانے گون بلوچ جهدکار واجه عبدالستار پُردلیءِ چا اوغانستانءَ بلوچ جیڑاهانی سرا

جنگ آزادی بخش بلوچستان و توطئه چینی سپاه تروریستی قدس

جنگ آزادی بخش بلوچستان و توطئه چینی سپاه تروریستی قدس

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

هجوم وحشيانه قشـون پارس و اشغال بلوچستان در سـال ۱۳۰۷ هجـری شمسـی

کئے لــڈینگ ءُ بلوچستـــــان ءَ آرگ بنــت ؟

کئے لــڈینگ ءُ بلوچستـــــان ءَ آرگ بنــت ؟

شهید واجہ صبا دشتیاریءِ ترانے 12 مئی 2011 کوئٹہ پریس کلبءِ دیما

شهید واجہ صبا دشتیاریءِ ترانے 12 مئی 2011 کوئٹہ پریس کلبءِ دیما

شھید شفی جان بلوچ

شھید شفی جان بلوچ

قومی اشتراک عمل : آزادی پسند تنظیموں سے رابطے کیلئے باقاعدہ کمیٹی تشکیل دی ہے : حیربیار مری

قومی اشتراک عمل : آزادی پسند تنظیموں سے رابطے کیلئے باقاعدہ کمیٹی تشکیل دی ہے : حیربیار مری

گپ و ترانے چا گیبنءَ گون شهید حیات بیوسءِ گهارءَ

گپ و ترانے چا گیبنءَ گون شهید حیات بیوسءِ گهارءَ

پاکستان بلوچستان میں بنگلہ دیش کی تاریخ دہرا رہا ہے : فیض بلوچ

پاکستان بلوچستان میں بنگلہ دیش کی تاریخ دہرا رہا ہے : فیض بلوچ

Gwank.org now available for Andorid Mobile

Gwank.org now available for Andorid Mobile

بلوچستان میں خواتین کی جبری گمشدگی وہلاکت افسوسناک و قابلِ مذمت ہیں:بی ایچ آر او

بلوچستان میں خواتین کی جبری گمشدگی وہلاکت افسوسناک و قابلِ مذمت ہیں:بی ایچ آر او

گپ ءُ ترانے گون بلوچ طلبا ایکشن کمیٹیءِ سروک ڈاکٹر ابابگر بلوچءَ بولان میڈیکل کالجءِ بلوچ نودربرانی جیڑاءِ سرا

گپ ءُ ترانے گون بلوچ طلبا ایکشن کمیٹیءِ سروک ڈاکٹر ابابگر بلوچءَ بولان میڈیکل کالجءِ بلوچ نودربرانی جیڑاءِ سرا

گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر حملہ کی مذمت کرتے ہیں۔ بی این ایم

2020-03-25 18:16:18
Share on

کوئٹہ / بلوچ نیشنل موومنٹ کے مرکزی ترجمان نے کہا کہ بلوچستان میں فوجی آپریشنوں میں نہایت تیزی لائی گئی ہے۔ ڈیڑھ سے زائد دہائیوں سے جاری آپریشن میں ہر نئی حکومت کے ساتھ شدت لائی گئی ہے۔ اس صدی کے شروع میں پاکستان کی فوجی حکومت نے بلوچستان میں آپریشن کا آغاز کیا تو نام نہاد جمہوری اور سیاسی جماعتوں نے اپوزیشن میں رہ کر مظالم کے خلاف جذباتی تقاریر کرکے بلوچ قوم کی ہمدردی حاصل کرنے کی کوشش کی، مگر اقتدار میں آکر جمہوری قوتوں کے مظالم نے فوج کو پیچھے چھوڑ دیا۔ آصف علی زرداری نے معافی کا لفظ استعمال کرکے مسخ شدہ لاشوں کی تعداد میں اضافہ کیا۔ دوسری طرف معافی بلوچ قوم کی تذلیل تھی۔ کیونکہ ظلم بلوچ قوم پر ہورہا ہے، اب بلوچ پر منحصر ہے کہ وہ قابض صوبائی ووفاقی حکمرانوں کو معاف کرے یا نہیں۔ نواز شریف کا انداز بھی مختلف نہ رہا۔ عالمی اداروں میں جمہوریت اور اظہار رائے کی آزادی کے دعویداروں نے اظہار رائے پر ایسی قدغن لگائے کہ تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔ سرکاری اسکول اور کالجوں کو فوجی کیمپوں میں تبدیل کیا کیا گیا اور نجی اسکولوں پر ریاستی ایماء اسلامی شدت پسندوں کے ذریعے حملے کروائے گئے یا اساتذہ کو اغوا کرکے اسکولوں کو تالا لگایا گیا۔
ترجمان نے کہا کہ بلوچی میں شاعری اور گانا کے ذریعے اظہار پر بھی پابندی لگائی گئی ہے۔ آج تمپ کے علاقے کونشقلات میں بلوچی زبان کے معروف موسیقار اور گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر دوسری دفعہ حملہ کرکے جلایا گیا۔ اس غیر جمہوری اور غیر انسانی فعل کی بھر پور مذمت کرتے ہیں۔ زبان و ثقافت کو زندہ رکھنے میں ایک اہم کردار گائیکی ہے۔ بلوچ ثقافت کو ختم کرنے کیلئے بلوچی زبان کے فنکاروں پر حملے کئے جا رہے ہیں۔ یہ پہلا حملہ نہیں ہے۔ اس سے پہلے مستونگ سے فقیر محمد عاجز اور بسیمہ سے علی جان ثاقب جیسے بلوچی اور براہوئی زبان کے گلوکاروں کو اغوا کرکے قتل کیا جا چکا ہے۔
ترجمان نے کہا کہ بلوچستان میں قابض ریاستی فورسز کی جانب سے بلوچوں کا اغواء، قتل اور گھروں کو جلانا بلوچستان کے طول و عرض میں جاری ہے۔ گزشتہ دس دنوں میں مند ، تمپ ، سامی، شاپک، بالگتر اور گچک کے مختلف علاقوں میں گن شپ ہیلی کاپٹروں کی بمباری اور زمینی فوجی کارروائیوں سے کئی بلوچ فرزند ہلاک یا اغوا کئے جاچکے ہیں۔ بمباری سے بے شمار مال مویشی ہلاک ہوچکے ہیں۔ گچک کے علاقے سولیر میں ہیلی کاپٹروں سے کمانڈوز اُتار کر گھروں کو حصار میں لیکر تمام مرد حضرات کو گرفتار کرکے لاپتہ کر دیا گیا ہے اور تمام گھر جلائے ہیں۔ مزکورہ لوگ کسان اور مزدور پیشہ بلوچ ہیں۔

Share on
Previous article

مسعود بارزانی کی طرف سے کردستان کی آزادی کی ریفرنڈم پر سمجھوتہ نہ کرنا خوش آئند ہے: حیربیار مری

NEXT article

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

LEAVE A REPLY