گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر حملہ کی مذمت کرتے ہیں۔ بی این ایم

گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر حملہ کی مذمت کرتے ہیں۔ بی این ایم

2020-03-27 16:55:59
Share on

کوئٹہ / بلوچ نیشنل موومنٹ کے مرکزی ترجمان نے کہا کہ بلوچستان میں فوجی آپریشنوں میں نہایت تیزی لائی گئی ہے۔ ڈیڑھ سے زائد دہائیوں سے جاری آپریشن میں ہر نئی حکومت کے ساتھ شدت لائی گئی ہے۔ اس صدی کے شروع میں پاکستان کی فوجی حکومت نے بلوچستان میں آپریشن کا آغاز کیا تو نام نہاد جمہوری اور سیاسی جماعتوں نے اپوزیشن میں رہ کر مظالم کے خلاف جذباتی تقاریر کرکے بلوچ قوم کی ہمدردی حاصل کرنے کی کوشش کی، مگر اقتدار میں آکر جمہوری قوتوں کے مظالم نے فوج کو پیچھے چھوڑ دیا۔ آصف علی زرداری نے معافی کا لفظ استعمال کرکے مسخ شدہ لاشوں کی تعداد میں اضافہ کیا۔ دوسری طرف معافی بلوچ قوم کی تذلیل تھی۔ کیونکہ ظلم بلوچ قوم پر ہورہا ہے، اب بلوچ پر منحصر ہے کہ وہ قابض صوبائی ووفاقی حکمرانوں کو معاف کرے یا نہیں۔ نواز شریف کا انداز بھی مختلف نہ رہا۔ عالمی اداروں میں جمہوریت اور اظہار رائے کی آزادی کے دعویداروں نے اظہار رائے پر ایسی قدغن لگائے کہ تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔ سرکاری اسکول اور کالجوں کو فوجی کیمپوں میں تبدیل کیا کیا گیا اور نجی اسکولوں پر ریاستی ایماء اسلامی شدت پسندوں کے ذریعے حملے کروائے گئے یا اساتذہ کو اغوا کرکے اسکولوں کو تالا لگایا گیا۔
ترجمان نے کہا کہ بلوچی میں شاعری اور گانا کے ذریعے اظہار پر بھی پابندی لگائی گئی ہے۔ آج تمپ کے علاقے کونشقلات میں بلوچی زبان کے معروف موسیقار اور گلوکار اُستاد منہاج مختار کے گھر پر دوسری دفعہ حملہ کرکے جلایا گیا۔ اس غیر جمہوری اور غیر انسانی فعل کی بھر پور مذمت کرتے ہیں۔ زبان و ثقافت کو زندہ رکھنے میں ایک اہم کردار گائیکی ہے۔ بلوچ ثقافت کو ختم کرنے کیلئے بلوچی زبان کے فنکاروں پر حملے کئے جا رہے ہیں۔ یہ پہلا حملہ نہیں ہے۔ اس سے پہلے مستونگ سے فقیر محمد عاجز اور بسیمہ سے علی جان ثاقب جیسے بلوچی اور براہوئی زبان کے گلوکاروں کو اغوا کرکے قتل کیا جا چکا ہے۔
ترجمان نے کہا کہ بلوچستان میں قابض ریاستی فورسز کی جانب سے بلوچوں کا اغواء، قتل اور گھروں کو جلانا بلوچستان کے طول و عرض میں جاری ہے۔ گزشتہ دس دنوں میں مند ، تمپ ، سامی، شاپک، بالگتر اور گچک کے مختلف علاقوں میں گن شپ ہیلی کاپٹروں کی بمباری اور زمینی فوجی کارروائیوں سے کئی بلوچ فرزند ہلاک یا اغوا کئے جاچکے ہیں۔ بمباری سے بے شمار مال مویشی ہلاک ہوچکے ہیں۔ گچک کے علاقے سولیر میں ہیلی کاپٹروں سے کمانڈوز اُتار کر گھروں کو حصار میں لیکر تمام مرد حضرات کو گرفتار کرکے لاپتہ کر دیا گیا ہے اور تمام گھر جلائے ہیں۔ مزکورہ لوگ کسان اور مزدور پیشہ بلوچ ہیں۔

Share on
Previous article

اوجگیری جنبش استقلال طلبانه بلوچستـان و سبعیت ارتش پاکستان

NEXT article

زمیں کا الَم – نوشین قمبرانی

LEAVE A REPLY

MUST READ

بحـران بـرق در بلوچستـان اشغالـی

بحـران بـرق در بلوچستـان اشغالـی

دہشت گردی کا مرکز پاکستان جیسے انتہا پسند ممالک ہیں : حیر بیار مری

دہشت گردی کا مرکز پاکستان جیسے انتہا پسند ممالک ہیں : حیر بیار مری

دس 10 ہزار سے زاہد بگٹی پناہ گزین افغانستان میں کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں۔ نواب براہمدغ بگٹی ریڈیو

دس 10 ہزار سے زاہد بگٹی پناہ گزین افغانستان میں کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں۔ نواب براہمدغ بگٹی ریڈیو

کوردستان ءِ جنگ آزادی، دیم په دیمی گوں میان استمانی تروریسم ءُ اروپایی – امریکی سیاسی واکدارانی دوپوستی

کوردستان ءِ جنگ آزادی، دیم په دیمی گوں میان استمانی تروریسم ءُ اروپایی – امریکی سیاسی واکدارانی دوپوستی

امپراتوریِ شیعیِ عجم بازندهٔ جنگ با اعراب

امپراتوریِ شیعیِ عجم بازندهٔ جنگ با اعراب

نامه جمعی از علمای اهل سنت که خواستار اعزام هئیت تحقیق در مورد ترورعلمای اهل سنت درایران هستند

نامه جمعی از علمای اهل سنت که خواستار اعزام هئیت تحقیق در مورد ترورعلمای اهل سنت درایران هستند

اقوام متحدہ، عالمی طاقتوں کی خاموشی بلوچ قوم کی لسانی اور ثقافتی نسل کشی کا باعث بن رہی ہے – ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ

اقوام متحدہ، عالمی طاقتوں کی خاموشی بلوچ قوم کی لسانی اور ثقافتی نسل کشی کا باعث بن رہی ہے – ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ

حمید صمصام نمونه بارز یک فاشیست ملی ـ مذهبی

حمید صمصام نمونه بارز یک فاشیست ملی ـ مذهبی

صوفی باہوٹ چک پیر محمد سری کلگ پیدارک کیچ ءُ ولی محمد چک شکاری یوسف سولانی سری کلگ پیدارک کیچ بیگواهیءُ شهادتءِ حال

صوفی باہوٹ چک پیر محمد سری کلگ پیدارک کیچ ءُ ولی محمد چک شکاری یوسف سولانی سری کلگ پیدارک کیچ بیگواهیءُ شهادتءِ حال

وقت کا بھی یہی تقاضا ہے کہ ہم قابضین کی مسلط کردہ نظام کو مضبوط بنانے کے بجائے قومی سوچ کو وسعت دیں

وقت کا بھی یہی تقاضا ہے کہ ہم قابضین کی مسلط کردہ نظام کو مضبوط بنانے کے بجائے قومی سوچ کو وسعت دیں

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ – بخش چهـارم

بر دانش آموزان بلـوچ چه می گـذرد؟ – بخش چهـارم

مغربی بلوچستانءِ سرمچار رحیم زرد کوهیءِ کلوه – 1980

مغربی بلوچستانءِ سرمچار رحیم زرد کوهیءِ کلوه – 1980

کئے لــڈینگ ءُ بلوچستـــــان ءَ آرگ بنــت ؟

کئے لــڈینگ ءُ بلوچستـــــان ءَ آرگ بنــت ؟

واجہ شیرو مری، بلوچ راج ئے نمیرانین سپاھیگ

واجہ شیرو مری، بلوچ راج ئے نمیرانین سپاھیگ

An interviw with Smruti S. Pattanik Institute for Defence Studies and Analyses

An interviw with Smruti S. Pattanik Institute for Defence Studies and Analyses